’’بائیکاٹ کے خاتمے پر ہی قطری شہری حج اور عمرہ کرنے سعودی عرب جائیں گے‘‘

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

سعودی عرب نے رمضان المبارک کے دوران قطری معتمرین کی سہولت کے لئے الیکڑانک پورٹل کا اجرا کیا لیکن دوحہ نے بائیکاٹ جاری رکھتے ہوئے اپنے شہریوں کو ’’بیت اللہ الحرام‘‘ کی زیارت سے منع کرتے ہوئے سارا الزام ریاض پر عائد کیا ہے کہ ایسا مملکت کی جانب سے قطری معتمرین کے سفر حجاز کی راہ میں رکاوٹوں کے باعث کیا جا رہا ہے۔

وزارت حج اور عمرہ سعودی عرب نے ایک بیان میں واضح کیا ہے کہ ’’دنیا بھر سے حج اور عمرہ کی غرض سے مملکت آنے والے اللہ کے مہمانوں کی خدمت کے لئے سہولیات کی فراہمی کے مسلمہ اصول کے پیش نظر سعودی نے عمرہ کے خواہش مند قطری بھائیوں کے لئے ان لائن پورٹل کا اجرا کیا ہے جس میں وہ اپنے کوائف درج کروا کر جدہ یا مدینہ منورہ کے ہوائی اڈوں کے ذریعے مناسک کے ادائیگی کے لئے مملکت کا سفر اختیار کر سکتے ہیں۔ سعودی آن لائن پورٹل https://qatariu.haj.gov.sa
پر قطری شہری اپنے کوائف کا اندراج کر سکتے ہیں۔ قطری حاجیوں کو مملکت لانے کے لئے سعودی حکومت نے اپنے جہاز بھجوانے کی پیش کش کے علاوہ کویت کی فضائی کمپنی کو بھی قطر سے معتمرین کو مملکت لانے اور لیجانے کی خصوصی اجازت دی تھی۔

سعودی عرب کے واضح اعلان اور پیشکش کے باجود قطر میں ’’انسانی حقوق کی قومی کمیٹی‘‘ نے سعودی حکام کی جانب سے رکاوٹیں کھڑی کرنے پر شدید دکھ اور افسوس کا اظہار کیا کیونکہ بقول کمیٹی ایسے اقدامات سے قطری شہریوں اور وہاں مقیم غیر ملکی تارکین وطن کو مسلسل تیسرے برس اپنے دینی شعائر اور مناسک کی ادائی میں مشکلات پیش آ رہی ہیں۔

حقیقت حال اس کے خلاف ہے۔ سعودی حکومت نے خلیجی ممالک کی جانب سے قطر کے بائیکاٹ کے بعد سے ہر سال باقاعدگی سے قطری حجاج اور معتمرین کو مملکت آنے اور جانے کی ہر ممکن سہولیات فراہم کی ہیں اور اس سال بھی یہ سلسلہ جاری ہے، تاہم قطر دینی شعائر کے معاملے کو سیاست کا رنگ دے کر اپنے مقاصد حاصل کرنا چاہتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں