.

شمالی سعودی عرب میں رمضان المبارک کے حوالے سے پتھروں پر تاریخی نقش ونگاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب میں تاریخ اور تہذیب وتمدن کے ایک دلدادہ شہری نے مملکت کے شمال میں صدیوں پرانی پتھروں پر نقش ونگاری کا پتا چلایا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق بندر الغیث تاریخ اور سیاحت سے بے پناہ لگائو رکھتےہیں۔ یہی شوق انہیں بیا بانوں اور پہاڑوں کے سفر پر مجبور کرتا ہے۔ حال ہی میں انہوں نے شمالی سعودی عرب میں تیماء کے علاقے کا سفر کیا جہاں انہیں پتھروں پر کندہ کی گئی عبارتیں ملیں جن میں سےبعض عبارتوں میں رمضان المبارک کے حوالے سے بھی پیغام شامل ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ سےبات کرتے ہوئے انہوں‌نے کہا کہ ایک چٹان پر لکھی عبارت سےاندازہ ہوتاہے کہ وہ عبارت حفص بن عمر کی ہے۔ غالبا یہ وہی شخصیت ہیں جو حفص بن عاصم بن عمر کے نام سے جانی جاتی ہیں۔ ان کی تاریخ وفات 92ھ یا 98 ھ بتائی جاتی ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ تیماء میں‌پائی جانے والی ایک چٹان پر عربی زبان میں ماہ صیام اور سال درج ہے،اس کے ساتھ کئی دوسرین نصوص اور عبارتیں موجود ہیں۔ان میں 'مائہ' یعنی ایک سو کا لفظ بھی لکھا گیا ہے۔ بعض چٹانوں اور پتھروں پر خاکے اور متعدد شکلوں اور رنگوں‌ پرانے برتن بھی ملےہیں۔

ایک سوال کے جواب میں بندر الغیث کاکہنا تھا کہ انہوں نے تبوک میں قومی ورثے کے تحفظ کے لیےقائم مرکز کے چیئرمین عبدالالہ الفارس سے ملاقات کرکےانہیں تیماء میں موجود اس تاریخی ورثے کی موجودگی کے بارے میں‌بتایا۔ انہوں نے میرا شکریہ ادا کرنے کے ساتھ ماہرین آثار قدیمہ کی ایک ٹیم بھی میرے ساتھ تاریخی چٹانوں کو دیکھنے کے لیے بھیجی۔

اس کے علاوہ انہوں‌نے سیاحت اور تحفظ قومی ورثہ کے ڈائریکٹر ڈاکٹر نایف بن علی القنور سے بھی ملاقات کی اور انہیں تیماء میں موجود تاریخ چٹانوں کے تحفظ پر انسے تبادلہ خیال کیا۔

تیماء میں موجود تاریخی نقوش کے بارے میں بات کرتے ہوئے عبدالالہ الفارس نے کہاکہ چٹانوں پرموجود تاریخی نقش ونگاری کے تحفظ کے لیے تمام ضروری اورممکنہ اقدامات کئے گئے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ جس علاقے میں یہ چٹانیں موجودہیں وہ تبوک گورنری کا حصہ ہے اور نقش ونگاری کی تاریخ اموی خلیفہ ھشام بن عبدالملک کے دور کی معلوم ہوتی ہے۔
ایک چٹان پر"اللهم اغفر لحفص بن عمر ولأهل تيماء أجمعين، وكتب في رمضان سنه ثمان ومائة، أنا هود بن ميسرة بن عمر أستغفر الله". اے پروردگار حفص بن عمرکی جملہ اہل تیماء کی مغفرت فرما۔ اس کے ساتھ چٹان پر ایک سو 8 ھ ماہ صیام درج ہے اور لکھا ہےکہ میں ھود بن میسرہ بن عمر ہوں۔استغفراللہ کے الفاظ درج ہیں۔