تین پائپ لائنوں پر سبوتاژ حملوں سے تیل کی فراہمی متاثر نہیں ہو گی: آرامکو

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کی سرکاری پٹرولیم کمپنی 'آرامکو' نے کہا ہے کہ تیل پائپ لائن پر دہشت گردوں کے حملے سے دو مقامات پر تیل کی سپلائی عارضی طور متاثر ہوئی جسے جلد ہی بحال کر لیا جائے گا۔ کمپنی کے ایک عہدیدار کا کہنا ہے کہ دہشت گردوں کے حملے سے سعودی عرب کی تیل اور گیس کی سپلائی زیادہ دیر تک بند نہیں رہے گی۔

'آرامکو' کے عہدیدار نے بتایا کہ وسطی سعودی عرب میں تیل پائپ لائن کے دو اسٹیشنوں پر حملوں سے کوئی جانی نقصان نہیں ہوا ہے۔

سرکاری تیل کمپنی آرامکو کا کہنا ہے کہ دہشت گردانہ حملے میں تیل پائپ لائن کے پائپ نمبر 8 کو ڈرون طیاروں کی مدد سے نشانہ بنایا گیا جس کے نتیجے میں پائپ نمبر 8 اور 9 عارضی طور پر متاثر ہوئے ہیں۔ کمپنی نے ان پائپوں سے تیل کی سپلائی روک دی ہے اور پائپ کے متاثرہ حصے کی مرمت کی جا رہی ہے۔

آرامکو کے ایک سینیر عہدیدار نے کہا کہ سعودی عرب یورپی ملکوں کو ماہانہ 10 ملین بیرل تیل فراہم کرنے کے لیے تیار ہے۔ اس وقت مملکت کی طرف سے یورپی ملکوں کو 3 ملین بیرل تیل ماہانہ فراہم کیا جا رہا ہے۔

خیال رہے کہ آج بروز منگل سعودی عرب کی اسٹیٹ سیکیورٹی پرزیڈنسی کے ترجمان نے اس امر کی تصدیق کی کہ پیڑولیم کمپنی آرامکو کے دو پمپنگ اسٹیشنز کو محدود پیمانے پر نقصان پہنچا ہے۔

اسٹیٹ سیکیورٹی ترجمان کے مطابق ’’منگل بمطابق 9 رمضان المبارک 1440ء کو صبح ساڑھے چھ بجے ریاض کے علاقے میں الدوامی اور عفیف کمشنریوں میں واقع آرامکو کمپنی کے دو پمپنگ اسٹیشنز کو نشانہ بنایا گیا۔‘‘

انھوں نے مزید کہا کہ واقعے کے بعد متعلقہ حکام نے علاقے کا چارج سنبھال لیا، تازہ صورت حال سے متعلق جلد اعلان کیا جائے گا۔

درایں اثنا سعودی عرب کے توانائی کے وزیر خالد الفالح نے بتایا کہ منگل کی صبح تیل سے مالا مال مشرقی صوبے سے لے کر بحیرہ احمر تک دو پائپ لائنوں کو نشانہ بنایا گیا ہے۔ سعودی پریس ایجنسی کے مطابق اس بڑی پائپ لائن میں یومیہ کم از کم 50 لاکھ بیرل کی گنجائش ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں