.

الازھر اور عرب لیگ کی سعودی عرب میں تیل پائپ لائنوں پرحملوں کی مذمت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

گذشتہ روز سعودی عرب میں تیل پائپ لائنوں کودھماکوں سے اڑانےعالمی سطح پر مذمت جاری ہے۔ مصرکی سب سے بڑی دینی درس گاہ جامعہ الازھر اور عرب لیگ نے بھی سعودی عرب میں تخریب کاری کی مذمت کرتے ہوئے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں الریاض کی حمایت جاری رکھنے کےعزم کا اظہار کیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ‌نیٹ‌ کےمطابق جامعہ الازھر کی طرف سےمنگل کےروز جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہےکہ الریاض کے علاقوں الدوادمی اور عفیف میں تیل پائپ لائنوں پر تخریب کارانہ حملےناقابل قبول ہیں۔

بیان میں کہا گیاہے کہ سعودی عرب میں تخریب کاری اور دہشت گردی کی وارداتوں کا مقصد ملک کو کمزور کرنا ہے مگر دہشت گرد اپنے مکروہ عزائم میں کامیاب نہیں ہوسکتے۔ تخریب کارانہ حملے آسمانی مذاہب کی تعلیمات، بین الاقوامی قوانین اور انسانی اصولوں کےمنافی ہیں۔ ان حملوں سے سعودی عرب کے دہشت گردی کے خلاف جنگ جاری رکھنے کےعزم کو شکست نہیں دی جا سکتی۔

درایں اثناء عرب لیگ کےسیکرٹری جنرل احمد ابو الغیط نے سعودی عرب میں تیل پائپ لائنوں کو ڈرون کی مدد سے تباہ کرنے کے واقعات کی شدید مذمت کی ہے۔

عرب لیگ کی طرف سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے کہ سعودی عرب میں تیل تنصیبات پردہشت گردانہ حملے نہ صرف سعودی بلکہ پورے خطے اور عالمی امن و سلامتی اور معیشت کے لیے خطرناک ہیں۔

عرب لیگ کےسیکرٹری جنرل کےترجمان محمودعفیفی نے کہا کہ کسی عرب ملک کی سلامتی پرحملہ تمام عرب اقوم اورممالک کی قومی سلامتی پرحملہ تصور ہوگا۔انہوں نے دہشت گردی، انتہا پسندی اور تخریب کاری کے خلاف عالمی برادری کومل کر کوششیں جاری رکھنے کی ضرور پرزوردیا۔

خیال رہے کہ کل منگل کو سعودی عرب میں تیل پائپ لائنوں پر بغیر پائلٹ ڈرون طیاروں کی مددسے حملہ کیا گیا جس کے نتیجے میں پائپوں کو نقصان پہنچا اور تیل کی سپلائی عارضی طورپر متاثر ہوئی ہے۔ یمن کے ایرانی حمایت یافتہ حوثی باغیوں‌نے اس حملےکی ذمہ داری قبول کی ہے۔