خطے میں ایران اور اس کے ایجنٹوں کے حملے تشویش کا باعث ہیں: بولٹن

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکا کی قومی سلامتی کے مشیر جان بولٹن نے باور کرایا ہے کہ مشرق وسطیٰ میں ایران اور اس کے ایجنٹوں کے حالیہ حملے تشویش کا باعث ہیں۔

بولٹن کے مطابق آئل ٹینکروں، پمپنگ اسٹیشنوں، عراق اور سعودی عرب پر حالیوں حملوں نے گہری تشویش کو جنم دیا ہے۔

برطانوی خبر رساں ایجنسی نے جمعے کے روز بتایا کہ امریکی فوج کے مطابق ایرانی پاسداران انقلاب امارات کے ساحل کے سامنے آئل ٹینکروں پر حملوں کی براہ راست ذمے دار ہے۔

امریکی ایڈمرل مائیل جیلڈے کا کہنا تھا کہ "ہم فجیرہ میں جہاز رانی پر ہونے والے حملے کو ایرانی پاسداران انقلاب کی طرف منسوب کرتے ہیں۔ وزارت دفاع (پینٹاگان) اس نتیجے پر پہنچی ہے کہ حملے میں استعمال ہونے والی بارودی سرنگیں پاسداران انقلاب کی ہیں"۔

ادھر امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ 1500 اضافی فوجیوں کو مشرق وسطیٰ بھیجنے کی منظوری دینے کا اعلان کر چکے ہیں۔ ٹرمپ نے باور کرایا ہے کہ مشرق وسطیٰ میں اضافی فورسز کی تعیناتی ایک "احتیاطی اقدام" ہے جس کا مقصد تحفظ فراہم کرنا ہے۔

اسی سلسلے میں امریکی عہدے داران نے امریکی خبر رساں ایجنسی کو بتایا کہ ارکان کانگرس کو اس نوٹیفکیشن سے آگاہ کر دیا گیا ہے۔ یہ پیش رفت مشرق وسطیٰ میں امریکی عسکری وجود میں اضافے سے متعلق پینٹاگان کی تجاویز پر بحث کے لیے وائٹ ہاؤس میں منعقد اجلاس کے ایک روز بعد سامنے آئی ہے۔

اس سے قبل تین امریکی ذمے داران نے بتایا تھا کہ امریکی تجزیے میں انکشاف ہوا ہے کہ اس بات کا "انتہائی غالب گمان" ہے کہ بحری جہازوں کو لپیٹ میں لینے والے حملوں کے پیچھے ایران کا ہاتھ ہے۔

ذمے داران کے مطابق چاروں بحری جہازوں کو اُن کے خیال میں دھماکا خیز آلات کے ذریعے حملے کا نشانہ بنایا گیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں