.

عدم جارحیت سے متعلق ایرانی اعلانات صرف زبانی جمع خرچ ہیں: کویتی عہدیدار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

کویت وزارت خارجہ کے ایک عہدیدار نے کہا ہے کہ ایران کی طرف سے پڑوسی ممالک یا خلیجی ملکوں کے خلاف عدم جارحیت کی یقین دہانی سے متعلق کوئی مفاہمتی یاداشت پیش نہیں کی گئی، ایسی تمام باتیں صرف زبانی جمع خرچ ہیں۔

کویت کے اخبار 'النھار' نے وزارت خارجہ کے ایک عہدیدار کا بیان نقل کیا ہے جس میں ان کا کہنا تھا کہ تہران کی طرف سے خلیجی ملکوں پر جارحیت نہ کرنے کی کوئی ضمانت نہیں دی گئی۔

کویتی عہدیدار کا کہنا تھا کہ ایرانی وزیر خارجہ کی طرف سے جس مفاہمتی یاداشت کی بات کی گئی تھی اس کی کوئی تفصیل ہمارے سامنے نہیں آئی۔ عراق۔ایران جنگ کے خاتمے کے بعد سلامتی کونسل کی قرارداد 598 میں خطے میں سلامتی اور اقوام متحدہ کی زیر نگرانی امن عمل آگے بڑھانے کے لیے جن اقدامات کا اعلان کیا گیا تھا ان پرعمل درآمد نہیں ہوا ہے۔

انہوں‌ نے کہا کہ ایران کی طرف سے کویت کو ایسی کوئی مفاہمتی پیشکش نہیں کی۔ ان کا کہنا تھا کہ ابھی تک صورت حال واضح نہیں‌ ہے۔

خیال رہے کہ دو روز پہلے ایرانی وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے کہا تھا کہ تہران نے خلیجی ممالک کو عدم جارحیت سے متعلق ایک یادداشت پیش کی ہے۔ ایرانی وزیر خارجہ کی طرف سے یہ دعویٰ ایک ایسے وقت میں کیا گیا تھا جب امریکا اور ایران کے درمیان سخت کشیدگی پائی جاتی ہے۔

جمعہ کو عراقی وزیر خارجہ کے ہمراہ ایک نیوز کانفرنس سے خطاب میں جواد ظریف کا کہنا تھا کہ انہوں‌ نے خلیجی ممالک کے خلاف عدم جارحیت کے معاہدے کی پیش کش کی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ایران تمام خلیجی ملکوں کے ساتھ متوازن تعلقات کے قیام کا خواہاں ہے۔