.

ترک شہری نے شامی پناہ گزین کو ذبح کر ڈالا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ترکی کے ایک شہری نے مرسین شہر میں ایک شامی پناہ گزین کا گلہ کاٹ کر فنا کے گھاٹ اتار دیا۔ پولیس نے ملزم کو حراست میں‌ لینے بعد اس سے پوچھ گچھ شروع کر دی ہے۔

العربیہ ڈاٹ‌ نیٹ کے مطابق شام کے شہر حلب سے اپنے تین بچوں کے ساتھ نقل مکانی کر کے ترکی آنے والے شامی شہری کو اس وقت قتل کیا گیا جب وہ تندور سے روٹی خریدنے کے لیے جا رہا تھا۔

مقتول کے ایک قریبی عزیز نے بتایا کہ شامی شہری کو مقامی شخص نے اس وقت حملے کا نشانہ بنایا جب وہ روٹی لینے ایک دکان پر جا رہا تھا۔ ترک شخص نے اس پر پیچھے سے وار کیا اور اسے ذبح کر کے قتل کر ڈالا۔ اس کے بعد اس کی لاش سڑک پر پھینک دی۔

ملزم کی شناخت نہیں ہو سکی تاہم مقتول شخص کی شناخت فیصل محی الدین علوش مراطی کے نام سے کی گئی ہے۔ اس کی عمر 33 سال ہے اور اس کے تین بچے ہیں۔

مقتول کے قریبی رشتہ دار نے بتایا کہ مراطی کو طرسوس کے مقام پر قتل کیا گیا۔ قاتل کا تعلق شام کی کرد نسل سے ہے اور اسے گرفتار کر لیا گیا ہے۔

ترکی میں شامی شہری کے بے رحمانہ قتل پر سوشل میڈیا پر سخت وغم وغصے کا اظہار کیا گیا ہے۔ شہریوں‌ نے شامی پناہ گزین کے قتل میں ملوث شخص کو عبرتناک سزا دینے کا مطالبہ کیا ہے۔