.

ایران کی طرف سے جارحیت کا خطرہ ٹلا نہیں: جان بولٹن

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی قومی سلامتی کے مشیر جان بولٹن نے کہا ہے کہ ایران کی طرف سے جارحیت کا خطرہ ٹلا نہیں، تاہم امریکا کے فوری حرکت میں آنے کے بعد ایران کو روک دیا گیا ہے۔

دورہ برطانیہ کے دوران صحافیوں سے بات کرتے ہوئے جان بولٹن نے کہا کہ ’’امریکا کی طرف سے فوری حرکت میں آنے اور خطے میں اپنی فوج تعینات کرنے کے نتیجے میں ایران کی طرف سے درپیش خطرہ کم کر دیا۔‘‘

جب ان سے پوچھا گیا کیا ’’ایران کے خلاف کارروائی کے معاملے میں ان کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے ساتھ اختلافات ہیں‘‘ تو ان کا کہنا تھا ’’کہ صدر ٹرمپ کی اس بات سے ہمیں اتفاق ہے کہ ہم ایران میں نظام کی تبدیلی نہیں‌ چاہتے۔ مگر ہمارے پیغام کو سمجھا جانا چاہیے۔‘‘

انہوں‌ نے مزید کہا کہ آئندہ ہفتے سلامتی کونسل میں وہ ایران کے دہشت گردانہ حملوں بالخصوص امارات کے سمندر میں تیل بردار جہازوں‌ پر حملوں‌ میں‌ ایران کے ملوث ہونے کے ٹھوس شواہد اور ثبوت پیش کریں گے۔

ایک سوال کے جواب میں‌ جان بولٹن نے مزید کہا کہ میرا خیال ہے کہ خطے کی صورت حال سے آگاہ کوئی بھی شخص یہی نتیجہ اخذ کرے گا کہ امارات کے قریب تیل بردار جہازوں‌ پر حملے ایران اور اس کے ایجنٹوں نے کیے ہیں۔

انہوں‌ نے کہا کہ ایران اور اس کے ایجنٹ امریکی مفادات پر حملے کی حماقت کر کے بہت بڑی غلطی کریں گے۔ اگر ایران مذاکرات کا خواہاں‌ ہے تو اسے طرز عمل تبدیل کرنا ہوگا۔