.

سوڈان نے قطر سے اپنا سفیر واپس بلا لیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

قطری میڈیا کے مطابق سوڈان کی وزارت خارجہ نے جمعے کے روز دوحہ سے اپنے سفیر کو واپس بلا لیا ہے۔

سوڈانی حکام نے الجزیرہ نیوز چینل سمیت قطری میڈیا کو ملک ملک سے نکال دیا ہے۔ سوڈانی ذمے داران کے مطابق اس اقدام کی وجہ مذکورہ میڈیا کی جانب سے سوڈان کے خلاف مسلسل اشتعال انگیزی ہے۔

ایک با خبر سوڈانی ذریعے نے بتایا کہ سوڈان کے عبوری حکام کو اس بات کا ادراک ہے کہ دوحہ کو اپنے حلیف عمر البشیر کی معزولی سے شدید دھچکا پہنچا ہے اور وہ اس نئی صورت حال سے خوش نہیں ہے۔ اسی وجہ سے قطر اب سوڈان میں انارکی کے مقصد سے اشتعال انگیزی پھیلا رہا ہے۔ یہ کام نہ صرف الجزیرہ جیسے ذرائع ابلاغ کے ذریعے بلکہ سابق حکومت سے تعلق رکھنے والی جماعتوں سے بھی لیا جا رہا ہے۔

رواں سال اپریل کے وسط میں سوڈانی حکام نے قطری وزیر خارجہ محمد بن عبدالرحمن آل ثانی کی قیادت میں خرطوم پہنچنے والے وفد کا استقبال کرنے سے انکار کر دیا تھا۔ اس کے نتیجے میں مذکورہ وفد واپس دوحہ روانہ ہو گیا تھا۔

اس موقع پر ایک اعلی سطح کے سوڈانی ذریعے نے العربیہ اور الحدث نیوز چینلوں کو بتایا تھا کہ قطری وفد کو آگاہ کر دیا گیا کہ سفارتی رواج کے مطابق دورے سے قبل رابطہ کاری اور اتفاق رائے ہونا لازم ہے اور اس دورے میں ان امور کا خیال نہیں رکھا گیا۔

سوڈان کی عبوری عسکری کونسل کی جانب سے قطری وفد کے استقبال سے انکار سے ایک روز قبل ہی کونسل کے سربراہ جنرل عبدالفتاح البرہان نے سعودی عرب اور امارات کے ایک اعلی سطح کے مشترکہ وفد کی آمد پر ان کا خیر مقدم کیا تھا۔ اس موقع پر البرہان نے سوڈان کے مملکت سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کے ساتھ امتیازی حیثیت کے تعلقات اور دونوں ملکوں کے عوام کے ساتھ دائمی روابط کو سراہا۔