.

یمنی حکومت کے ساتھ گریفتھس کے معاملے پر بات چیت کے لیے گوٹیرس کی سکریٹری ریاض جائیں گی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

العربیہ کو باوثوق اور باخبر ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل انتونیو گوٹیرس آئندہ ہفتے اپنی سیاسی امور کی سکریٹری روزمیری ڈی کارلو کو سعودی دارالحکومت ریاض بھیجیں گے۔ روزمیری ریاض میں یمنی صدر عبدربہ منصور ہادی اور یمنی حکومت کے ذمے داران سے ملاقات کریں گی۔ ملاقات میں یمن کے لیے اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی مارٹن گریفتھس کے ساتھ معاملات کا موضوع اور سلامتی کونسل کی قراردادوں پر مذکورہ ایلچی کے عمل درامد کے حوالے سے یمنی حکومت کو مطلوب ضمانتیں زیر بحث آئیں گی۔

یمن کے اعلیٰ اختیاراتی ذرائع نے باور کرایا ہے کہ یمنی حکومت اس حوالے سے ضمانتیں حاصل کرنے پر سختی سے قائم ہے کہ آئندہ اقوام متحدہ کے ایلچی مارٹن گریفتھس کی جانب سے اختیارات سے تجاوز سامنے نہیں آئے گا۔

ذرائع نے باور کرایا ہے کہ اقوام متحدہ کا جنرل سکریٹریٹ اور برطانیہ ،،، سلامتی کونسل میں جمعہ 17 جون کو مارٹن گریفتھس کی آئندہ بریفنگ سے قبل یمنی حکومت اور اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی کے درمیان بحران کو ختم کرانے کے خواہش مند ہیں۔

یمنی صدر نے مئی کے اواخر میں اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل کو بھیجے گئے خط میں یمن کے لیے خصوصی ایلچی مارٹن گریفتھس کی جانب سے اپنے اختیارات سے تجاوزات پر روشنی ڈالتی تھی۔

ہادی نے واضح کیا کہ گریفتھس اس بات پر مُصر ہیں کہ حوثیوں کے ساتھ ایک باقاعدہ حکومت کی طرح معاملہ کیا جائے اور وہ باغیوں کو آئینی حکومت کے مساوی درجہ دے رہے ہیں۔ ہادی نے مزید کہا کہ حوثیوں کے عقائد ، نظریات اور سیاسی افکار سے لاعلم ہونے کے سبب اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی یمن کے مسئلے کو نمٹانے کی قدرت نہیں رکھتے۔ یمنی صدر نے کہا کہ گریفتھس نے قیدیوں اور گرفتار شدگان کے معاملے کے علاوہ دیگر اہم شقوں پر کام بھی روک دیا ہے۔