.

آبنائے ہرمز میں دہشت گردی ایران پر ضرب لگانے کی متقاضی ہے : امریکی سینیٹر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی کانگرس میں خارجہ پالیسی کے حوالے سے ایک اہم شخصیت سینیٹر ٹوم کاٹن کا کہنا ہے کہ "آبنائے ہرمز میں تجارتی آمد و رفت کے خلاف بلا جواز دہشت گردی ،، ایران کے خلاف انتقامی عسکری ضرب کی متقاضی ہے"۔

امریکی سینیٹر نے یہ بات ایک ٹی وی انٹرویو کے دوران کہی جس کی جھلکیاں انہوں نے اپنے ٹویٹر اکاؤنٹ پر پوسٹ کی ہیں۔

ٹوم کاٹن نے ٹویٹ میں لکھا کہ یہ ایک منطقی امر ہے کہ ایرانی ان حملوں کے حوالے سے جھوٹ بولیں گے۔ تاہم دوسروں پر لازم ہے کہ وہ ان کے جھوٹ کا یقین نہ کریں۔ کوئی بھی انسان یہ دیکھ سکتا ہے کہ ایرانی ماہی گیر اُس سمندری بارودی سرنگ کو ہٹا رہے ہیں جو انہوں نے ایک تیل بردار جہاز پر نصب کی تھی۔

امریکی سینیٹر کا یہ بیان تجارتی جہازوں کو ایک سے زیادہ مرتبہ نشانہ بنانے اور سعودی تنصیبات پر حملوں کے بعد واشنگٹن اور تہران کے درمیان کشیدگی میں اضافے کے بیچ سامنے آیا ہے۔

ٹوم کاٹن کو اس بات پر پورا بھروسہ ہے کہ ایران کے ساتھ جنگ ہوئی تو امریکا محض دو حملوں (ایک پہلا حملہ اور ایک آخری حملہ) میں ہی فتح یاب ہو جائے گا۔

اس سے قبل ایک ٹی وی انٹرویو میں امریکی سینیٹر کہہ چکے ہیں کہ وہ ایران کے خلاف جنگ کا دفاع نہیں کر رہے ہیں لیکن انہوں نے خبردار کیا کہ خطے میں امریکی مفادات کے خلاف کسی بھی قسم کی اشتعال انگیزی پر "غضب ناک رد عمل" سامنے آئے گا۔