.

پہلی سعودی خاتون ہواباز کا حائل ہوائی اڈے پہنچنے پر شاندار استقبال

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی پہلی خاتون پائلٹ کے حائل کے ہوائی اڈے پر پہنچنے پران کا شاندار استقبال کیا گیا۔ دوسری جانب سوشل میڈیا پر بھی ان کی غیرمعمولی تعریف وتوصیف کی جا رہی ہے۔

العربیہ ڈاٹ‌ نیٹ‌ کے مطابق کیپٹن پائلٹ یاسمین المیمنی گذشتہ روز معاون ہواباز کی حیثیت سے طیارہ اڑاتےہوئے حائل ہوائی اڈے پراتریں جہاں ہوائی اڈے کے حکام نے ان کا پرتپاک استقبال کیا اور انہیں پھول پیش کیے۔ اس کےساتھ ساتھ سوشل میڈیا پربھی پائلٹ یاسمین المیمنی کی غیرمعمولی حوصلہ افزائی جاری ہے۔

یاسمین المیمنی 'نسما ایئر' فضائی کمپنی میں معاون ہواباز کے طورپرتعینات کی گئی ہیں۔ ان کا تعلق حائل سے ہے جہاں وہ گذشتہ روز پرواز کے ذریعے پہنچیں تو ان کا شاندار استقبال کیا گیا۔

خیال رہے کہ 29 سالہ یاسمین المیمنی نے امریکا میں ہوابازی کا لائسنس حاصل کیا تھا جسے سنہ 2013ء میں سعودی لائسنس میں تبدیل کردیا گیا تاہم اس عرصے میں انہیں طیارہ اڑانے کاموقع نہیں ملا۔ یہ پہلا موقع ہے جب وہ طیارہ اڑا کر حائل پہنچی ہیں۔

'نسما ایئر' نے یاسمین المیمنی کو معاون ہواباز کےلیے تعینات کیا ہے۔ اس نے اردن سے ہوابازی کی تربیت حاصل کی اور امریکا میں 300 گھنٹے کا ہوابازی کا تجرباتی کورس کیا۔ وہ سعودی عرب میں ہوابازی کا خواب دیکھ رہی تھیں۔ یاسمین سعودی عرب کی پہلی خاتون ہیں جو ایک فضائی کمپنی میں معاون ہواباز تعینات کی گئی ہیں۔

العربیہ ڈاٹ‌ نیٹ نے حال ہی میں‌یاسمین کا ایک انٹرویو شائع کیاتھا جس میں انہوں‌ نے ہوابازی کے میدان میں مستقبل میں اپنے خوابوں کے بارے میں تفصیل کےساتھ بات کی۔