.

سعودی شہریوں کا دلیرانہ کارنامہ، آگ میں گھرے بچوں کو بحفاظت نکال لیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے شہر مکہ مکرمہ میں ایک گھر میں آگ لگنے کے بعد دو مقامی شہریوں نے اپنی جانوں کو خطرے میں ڈال کر دھوئیں کے گہرے بادلوں کے بیچ سے 3 بچوں کو نکال کر بچا لیا۔

بہادری اور دلیری کا کارنامہ انجام دینے والے دو سعودیوں میں شامل عبدالعزیز الزہرانی نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ وہ جمعرات کے روز عصر کے بعد اپنے ایک دوست ابراہیم عسیری کے ہمراہ مکہ مکرمہ کے علاقے الشرائع میں ایک ریستوران کی جانب جا رہے تھے۔ اس دوران ایک سڑک پر سے گزرتے ہوئے انہیں کچھ بچوں کے چیخنے کی آوازیں سنائی دیں۔ یہ بچے اپنے گھر میں آگ لگنے کے بعد کھڑکی کے ذریعے لوگوں سے مدد طلب کر رہے تھے۔

عبدالعزیز اور ابراہیم متاثرہ اپارٹمنٹ تک پہنچے اور اس کا دروازہ توٹنے کی ہر ممکن کوشش کی مگر دھوئیں کی شدید کثافت کے سبب کامیاب نہ ہو سکے۔ اس کے بعد عبدالعزیز تیزی کے ساتھ بیرونی جانب سے گھر کی دیوار پر چڑھ گیا اور کھڑکی کا شیشہ توڑ کر چھوٹی سی جگہ سے تینوں بچوں کو نکال کر ان کی زندگیاں بچا لیں۔ عبدالعزیز کے مطابق یہ ان کی زندگی میں اس نوعیت کا پہلا واقعہ ہے۔ انہوں نے بچوں کی جان بچانے کی توفیق ملنے پر اللہ تعالی کا شکر ادا کیا۔

بچوں کے ایک پڑوسی اور سعودی ہلال احمر تنظیم کے طبی کارکن سلطان القرشی نے بتایا کہ یہ آگ عصر کی نماز کے بعد اپارٹمنٹ کے ایک بیڈ روم میں لگی۔ اس وقت گھر میں تینوں بچوں کے سوا کوئی نہ تھا۔ بچوں کو بچائے جانے کے بعد وہ تینوں کو اپنے گھر لے گئے اور ان کا معائنہ کیا کہ آیا گہرے دھوئیں کی کثافت سے ان بچوں کے سانس لینے کا عمل متاثر تو نہیں ہوا۔ القرشی کے مطابق اللہ کے فضل سے کسی بچے کو کسی قسم کا نقصان نہیں پہنچا۔