.

الحدیدہ : حوثی ملیشیا اقوام متحدہ کی نگراں کمیٹی کے اجلاس کے نتائج برباد کرنے کے درپے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں باغی حوثی ملیشیا نے اتوار کے روز الحدیدہ شہر کے اندر خود کش در اندازی کی کوشش کی۔ یہ اقدام باور کراتا ہے کہ حوثی باغی اقوام متحدہ کی نگراں کمیٹی کے مشترکہ اجلاس کے نتائج پر پانی پھیر دینے کے لیے کوشاں ہے۔ یہ اجلاس سویڈن معاہدے کو بچانے کی آخری کوشش کے طور پر منعقد کیا گیا تھا۔

تفصیلات کے مطابق مشترکہ یمنی مزاحمتی فورسز کے عسکری میڈیا نے بتایا ہے کہ حوثی ملیشیا نے گذشتہ گھنٹوں کے دوران اپنے درجنوں عناصر کو الحدیدہ میں شارع صںعاء پر آزاد کرائے گئے رہائشی علاقوں میں خود کش در اندازی کے لیے دھکیل دیا۔ تاہم اس کوشش کا کوئی فائدہ نہیں ہوا۔ در اندازی کی یہ کوشش ہوائی اڈے کے شمال مشرق میں رہائشی علاقوں کے اندر سے شروع ہوئی۔ اس دوران ایک گھنٹے تک شدید فائرنگ کا سلسلہ جاری رہا تاہم یمنی مزاحمتی فورسز کے سامنے حوثی عناصر واپس لوٹ گئے۔

حوثی ملیشیا نے در اندازی کی کوشش کے ساتھ شارع صنعاء پر رہائشی علاقوں کو مارٹر گولوں سے نشانہ بنایا۔ اس کے نتیجے میں شہریوں کے گھروں اور املاک کو مزید نقصان پہنچا۔

ادھر الحدیدہ کے جنوب میں شہر التحیتا کو حوثیوں کی جانب سے شدید گولہ باری کا نشانہ بنایا گیا۔ اس دوران توپوں اور راکٹوں کا استعمال کیا گیا۔

العمالقہ بریگیڈز کے میڈیا سینٹر کے مطابق حوثی ملیشیا نے اتوار کے روز ایک بار پھر التحیتا کے پہاڑی علاقے میں مشترکہ فورسز کے ٹھکانوں کو نشانہ بنایا۔ اس دوران مارٹر گولوں اور درمیانے درجے کے ہتھیاروں کا استعمال کیا گیا۔

باغی ملیشیا نے الحدیدہ کے جنوب میں حیس ضلع میں بھی بھاری، درمیانے اور چھوٹے ہتھیاروں کے ساتھ مشترکہ فورسز کے ٹھکانوں پر حملے کیے۔

یمنی مشترکہ فورسز نے ہفتے کی شام اعلان کیا تھا کہ حوثی ملیشیا نے زبید ضلع میں حربی کُمک کے راستے پر پھر سے کام شروع کر دیا ہے۔ یہ راستہ زبدی اور التحیتا شہر کے درمیان دور دراز علاقوں سے شروع ہوتا ہے اور حسین رضی، المسلب ، الرویہ اور بنی الہادی کے دیہات سے گزرتا ہے۔ اس راستے کا مقصد التحیتا شہر میں مشترکہ فورسز کو چکمہ دے کر شہر کے جنوب میں دور دراز علاقوں تک پہنچنا ہے۔