.

شام کے سرحدی شہرمیں حزب اللہ کے مرکز پر اسرائیل کا میزائل حملہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام کےجنوب مغربی سرحدی علاقے القنیطرہ کے مضافات میں اسرائیل نے لبنانی شیعہ ملیشیا کے ایک مرکز پرمیزائل حملہ کیا ہے۔ شام کے سرکاری ذرائع ابلاغ نے اس حملے کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا ہے کہ اس میں اسد رجیم کے دفاع میں لڑنے والی لبنانی تنظیم کی نقل وحرکت کو نشانہ بنایا گیا ہے۔

شام کی سرکاری نیوز ایجنسی'سانا' کے مطابق اسرائیل کے میزائل حملے کے نتیجے میں کسی قسم کا جانی نقصان نہیں ہوا، تاہم اس سے املاک کو نقصان پہنچا ہے۔

'العربیہ' اور 'الحدث' چینلوں کی رپورٹس کے مطابق اسرائیل نے القنیطرہ میں تل بریقہ کے مقام پر حزب اللہ کی سرگرمیوں کو نشانہ بنایا۔

خیال رہے شام میں 8 سال سے جاری خانہ جنگی کے دوران حزب اللہ اسد رجیم کے دفاع میں لڑ رہی ہے۔ حزب اللہ کے جنگجو شام کے مختلف علاقوں میں موجود ہیں جو بشارالاسد اور ایران کی دیگر ملیشیائوں کے ساتھ مل کر اپوزیشن فورسز کو کچلنے میں سرگرم ہیں۔

اسرائیل کی طرف سے شام میں حزب اللہ اور ایرانی ملیشیائوں کے ٹھکانوں پرحملوں کا یہ پہلا واقعہ نہیں بلکہ اسرائیل اکثر شام میں حزب اللہ اور دیگر اہداف پربمباری کرتا رہتا ہے۔ دو ہفتے قبل درعا اور القنیطرہ میں اسرائیل نے اسد رجیم کی اہم تنصیبات پر فضائی حملے کیے تھے۔

انسانی حقوق کی صور ت حال پرنظر رکھنے والے ادارے'آبزر ویٹری' کے مطابق گذشتہ ہفتے شام میں اسرائیل کے فضائی حملوں میں چھ ایرانیوں اور تین شامی باشندوں سمیت 9 افراد ہلاک ہوگئے تھے۔

بیس جون کو اسرائیل نے دمشق کے قریب اور حمص گورنری میں متعدد فوجی تنصیبات پربمباری کی تھی جب کہ شام کےسرکاری میڈیا کے مطابق اسرائیل کی طرف سے متعدد میزائل حملے ناکام بنا دیے گئے تھے۔ مذکورہ دونوں مقامات پر ہونے والے حملوں کے نتیجے میں 15 افراد ہلاک ہوگئے تھے۔ ان میں 9 غیرملکی جنگجو شامل تھے۔