.

یمن کا داعش کے خلاف بین الاقوامی اتحاد میں شمولیت کا اعلان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن نے جمعرات کے روز داعش کے خلاف سرگرم بین الاقوامی اتحاد میں شامل ہونے کا اعلان کیا ہے۔

اس سلسلے میں یمن کی سرکاری خبر رساں ایجنسی نے یمنی وزارت خارجہ کا ایک بیان جاری کیا ہے۔ بیان کے مطابق "یہ اقدام یمنی حکومت کی اُن کوششوں کا حصہ ہے جو وہ دہشت گردی اور مذہبی و فکری انتہا پسندی کے خلاف جنگ میں انجام دے رہی ہے۔ یہ امور ایک خطرناک رجحان ہے جس کا کسی مذہب اور وطن سے کوئی تعلق نہیں"۔

داعش تنظیم کے خلاف بین الاقوامی اتحاد کی شکیل ستمبر 2014 میں عمل میں آئی تھی۔ اس کے رکن ممالک کی تعداد 80 ہے۔ بین الاقوامی اتحاد کا مقصد داعش تنظیم کا قلع قمع کر کے اسے ہزیمت سے دوچار کرنا ، اس کے نیٹ ورکس کا خاتمہ کرنا اور عالمی سطح پر توسیع کے حوالے سے تنظیم کی خواہشات کے سامنے ڈٹ جانا ہے۔

عراق اور شام میں فوجی مہم کے ساتھ بین الاقوامی اتحاد نے داعش تنظیم کے مالی اور اقتصادی انفرا اسٹرکچر سے نمٹنے کا عزم کر رکھا ہے۔ وہ سرحد کے راستے غیر ملکی جنگجوؤں کی آمد و رفت پر روک لگانے کے لیے بھی کوشاں ہے۔