.

میزائلوں کی رینج میں مسلسل اضافے کے لیے کوشاں ہیں: ایرانی عہدیدار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران کی مسلح افواج کے معاون برائے آپریشنزامور مہدی ربانی نے کہا ہے کہ تہران اپنے میزائلوں کے مار کرنے کی صلاحیت میں مسلسل اضافے کے لیے کوشاں ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ ہم روزانہ کی بنیاد پر میزائلوں کی رینج بڑھا رہےہیں۔

خیال رہے کہ ایرانی عہدیدار کی طرف سے یہ بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب دوسری جانب خطے میں ایران اورامریکا ایک دوسرے کے سامنے حالت جنگ میں کھڑے ہیں۔ امریکا ایران پر بیلسٹک میزائلوں کی تیاری کے ذریعے سلامتی کونسل کی قرارداد 2231 کی خلاف ورزی کا الزام عاید کرتا ہے۔

میجر جنرل ربانی نے شام میں بشارالاسد کے دفاع میں لڑتے ہوئے مارے جانے 'الفاطمیون' بریگیڈ کے جنگجوئوں کی یاد میں منعقدہ ایک تقریب سے خطاب میں کیا۔

خبر رساں ایجنسی 'تسنیم' کے مطابق جنرل ربانی نے کہا کہ ہماری میزائل صلاحیت کا علاقائی اور عالمی خلاف ورزیوں کی روک تھام میں اہم کردار ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ہم مسلسل اپنے میزائلوں کی رینج میں اضافے کی کوشش کررہے ہیں۔

ایک سوال کےجواب میں انہوں نے کہا کہ ایرانی میزائلوں کی پیچیدگی مسلسل بڑھ رہی ہے۔ ایران کے سرکاری ٹی وی چینل پر بھی میزائل کارروائیاں دکھائی گئی ہیں۔ شام میں 'داعش' کے ٹھکانوں پر داغے گئے ایرانی میزائل امریکی فوجی اڈوں کے اوپر سے گذر کر جاتے رہے ہیں۔

خیال رہے کہ گذشتہ برس اکتوبر میں ایران نے شام کے شہر البوکمال میں 'داعش' کے ٹھکانوں پر میزائلوں سے حملہ کیا تھا۔ ایران کا دعویٰ ہےکہ اس نے یہ حملہ اھواز شہر میں ایک فوجی پریڈ پر کی گئی دہشت گردانہ کارروائی کے انتقام میں کیا۔ اس کارروائی میں درجنوں ایرانی فوجی ہلاک اور زخمی ہوگئے تھے۔ ایران نے شام میں چھ بیلسٹک میزائل داغے جن میں سےدو میزائل ایران کی اپنی حدود میں جوان رود کے مقام پر گرے جن سے غیرمعمولی مادی نقصان پہنچا تھا۔