.

حوثیوں کے وفد نے خامنہ ای کی ولایت کو نبی کی ولایت کی کڑی قرار دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایرانی سپریم لیڈر کی ویب سائٹ کے مطابق علی خامنہ ای نے منگل کے روز حوثیوں کے ایک وفد کا استقبال کیا۔ وفد نے باغی ملیشیا کے سربراہ عبدالملک الحوثی کا ایک پیغام خامنہ ای کو پہنچایا۔

ویب سائٹ نے بتایا کہ اس موقع پر ایرانی مرشد اعلی نے حوثیوں کی کوششوں کو عظیم قرار دیتے ہوئے انہیں نصرت و کامیابی کی نوید سنائی۔ اسی طرح خامنہ ای نے عبدالملک الحوثی کے بھائی ابراہیم الحوثی کے قتل پر تعزیت کا اظہار کیا اور حوثی خاندان کو خراج تحسین پیش کیا۔

خامنہ ای کا کہنا تھا کہ تمام عقائد و نظریات اور قومیتوں کے بیچ یمنی یک جہتی کو برقرار رکھنے کے لیے یمنی باہمی مکالمے کی ضرورت ہے۔

واضح رہے کہ یمن میں ایک قومیت اور ایک عقیدہ ہے۔

خامنہ ای نے ایران کے امریکا اور مغرب دشمن مواقف پر تفاخر کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ یہ مواقف کسی تعصب پر نہیں بلکہ حقیقت پر مبنی ہیں اور امریکی اور مغربی ذمے داران کے تصرفات کا نتیجہ ہے۔

حوثیوں کے وفد کی سربراہی محمد عبدالسلام نے کی۔ وہ حوثی ملیشیا کے ترجمان ہیں۔ ترجمان نے خامنہ ای کو بتایا کہ حوثیوں کے نزدیک "خامنہ ای کی ولایت رسول اللہ اور علی بن ابو طالب کی ولایت کی کڑی ہے"۔

یاد رہے کہ ایران 2014 میں صنعاء میں حوثیوں کے ہاتھوں یمنی آئینی حکومت کا تختہ الٹے جانے کے بعد سے مالی رقوم، ہتھیاروں اور عسکری مشیران کے ذریعے حوثی ملیشیا کی سپورٹ کر رہا ہے۔ ایران نے اقوام متحدہ کی قرار دادوں کی دھجیاں اڑاتے ہوئے حوثیوں کے لیے میزائل اور ڈرون طیارے اسمگل کرنے کا سلسلہ جاری رکھا ہوا ہے۔