.

بیوی کا قاتل تہران کا سابق میئر پھانسی سے بچ گیا

مقتولہ کے خاندان نے علی نجفی کو معاف کردیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران کے دارالحکومت تہران کے سابق میئر محمد علی نجفی اپنی بیوی کے قتل کے جرم میں سزائے موت سے بچ گئے۔ مقتولہ کے خاندان نے علی نجفی کا جرم معاف کر دیا جس کے بعد قاتل کی زندگی بچ گئی۔

خبر رساں اداروں کے مطابق ایران میں سوشل میڈیا کے ذریعے مقتولہ کے بھائی نے ایک بیان جاری کیا ہے جس میں ان کا کہنا ہے کہ 30 جولائی کو 67 سالہ علی نفجی کو اپنی دوسری بیوی میترا استاد بیوی کے قتل کے جرم میں سزائے موت سنائی گئی تھی۔ استاد علی نجفی سے عمر میں 30 سال چھوٹی تھی۔ اسے رواں سال 28 جولائی کو گولیاں مار کر قتل کر دیا تھا۔

خیال رہے کہ ایران میں مقتول کا خاندان قاتل کی سزا معاف کرنے کا مجاز ہے۔ ایران میں قصاص کا قانون ہے۔ یعنی آنکھ کے بدلے میں آنکھ کا قصاص لیا جاتا ہے۔ میترا استاد کے خاندان نے پہلے تو کیس لڑا مگر اب اس نے قاتل کو معاف کر دیا ہے۔

مقتولہ میترا استاد کے بھائی مسعود استاد نے انسٹا گرام پر پوسٹ کردہ ایک بیان میں کہا کہ ان کے خاندان نے محمد علی نجفی کو معاف کر دیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ علی نجفی اور ان کے خاندان کے درمیان بعض اہم شخصیات نے ثالثی کرائی جس کے بعد ان کے خاندان نے قاتل کو معاف کر دیا۔

انہوں نے کہا کہ ہمیں خوشی ہے کہ ہم خون بہائے بغیر اس محترم شخص کو معاف کرنے پر متفق ہوگئے۔

ایران کی ارنا نیوز ایجنسی کے مطابق متقولہ کے خاندان کے وکیل محمود حجی لوئی نے بھی علی نجفی کی سزا کی معافی کی تصدیق کی ہے۔

خیال رہے کہ علی نجفی اس وقت تہران کی ایک جیل میں قید ہے۔ اسے غیر قانونی طور پر اسلحہ رکھنے کے جرم میں دو سال قید کی سزا سنائی گئی ہے۔ یہ واضح نہیں ہوسکا کہ آیا علی نجفی کی سزائے موت کی معافی سے قید کی سزا میں کوئی کمی کی جائے گی یا نہیں۔