.

حج میں فرض شناسی کا مظاہرہ کرنے والے سیکورٹی اہل کار کی سعودی وزیر داخلہ سے ملاقات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی وزیر داخلہ شہزادہ عبدالعزیز بن سعود بن نایف نے حج سیزن میں وائرل ہونے والے وڈیو کلپ سے ہیرو بن جانے والے سعودی سیکورٹی اہل کار ماجد بن نادر عبدالعزیز سے ملاقات کی۔

وڈیو کیمرے میں محفوظ منظر کے مطابق دوران حج ایک عمر رسیدہ عرب خاتون نے اللہ کے مہمانوں کی خدمت میں انتھک کوششوں پر وہاں مامور ایک سیکورٹی اہل کار کو تحفتا کچھ پیش کیا۔ اس پر مذکور سیکورٹی اہل کار (ماجد بن نادر عبدالعزیز) نے مسکراتے ہوئے جواب دیا کہ "یہ میرا فرض ہے" اور وہ تحفہ لینے سے انکار کر دیا۔

ماجد نے اس حوالے سے بتایا کہ "میں حجاج کرام کو ٹرین کی جانب بھیج رہا تھا۔ اس دوران ایک عرب خاتون نے میری طرف آ کر کہا کہ اللہ تم کو خوش رکھے۔ میں تم کو یہ کچھ رقم بطور تحفہ پیش کرنا چاہتی ہوں۔ اس پر میں نے اس بڑی عمر کی خاتون سے کہا کہ یقینا یہ میرا فرض اور میرا کام ہے ، میں یہاں اللہ کے مہمانوں کی خدمت کے لیے موجود ہوں"۔

ماجد بن نادر عبدالعزیز نے سعودی وزیر داخلہ سے ملاقات میں کہا کہ وہ اُن کی جانب سے ٹیلی فون کال موصول ہونے پر فخر اور مسرت محسوس کرتا ہے اور "اس کال نے میرے سینے کو ٹھنڈا کر دیا"۔

یاد رہے کہ سعودی وزیر داخلہ نے ماجد کو بطور انعام ایک لاکھ ریال اور ایک گاڑی پیش کرنے کا اعلان کیا تھا۔