.

سعودی عرب کا یمنی بھائیوں میں پھوٹ پڑنے کے واقعات پراظہار افسوس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب نے جمعرات کے روز کہا کہ ہے کہ یمن کے عبوری دارالحکومت عدن میں حالیہ ایام میں پیداہونے والی کشیدگی اور یمنی بھائیوں میں پھوٹ گہرے افسوس کا باعث ہے۔ سعودی عرب نے اس بات پر زور دیا کہ یمن کو عدم استحکام سے دوچار کرنے کی کوئی بھی کوشش مملکت اور خطے کی سلامتی اور استحکام کے لئے خطرہ ہے۔

سعودی عرب کی سرکاری نیوز ایجنسی 'ایس پی اے' کے مطابق مملکت جنوبی یمن میں رنما ہونے والے واقعات کا باریکی سے جائزہ لے رہی ہے۔ سعودی عرب نے جنوبی یمن میں آئینی حکومت اور عبوری انقلابی کونسل کےدرمیان پیدا ہونے والے اختلافات پر گہری نظر رکھی ہوئی ہے اور الریاض ان اختلافات کو دور کرنے کے لیے ہرممکن کوشش کررہا ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ سعودی عرب جنوبی یمن میں آئینی حکومت عبوری انقلابی کونسل کے درمیان بات چیت اور مصالحت کی کوششیں آگے بڑھانے کی کوششیں جاری رکھے گا۔ جنوبی یمن اور عدن سمیت تمام علاقوں میں آئینی حکومت کی رٹ بحال کرنے اور تمام سرکری، عسکری اور نجی اداروں پر حکومتی کنٹرول بحال کرنے کے لیے موثر اقدامات کیے جا رہے ہیں۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ سعودی عرب کو یمن کے بھائیوں میں بغاوت کے پھیلنے پر بھی افسوس ہوا ہے۔ سعودی عرب فریقین میں جنگ بندی کو آگے بڑھانےامن کے لیے فوری اورغیر مشروط عزم کی ضرورت پرزورع دیا۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ برادر یمنی عوام کی زندگیوں کو متاثر کرنے والی کسی بھی خلاف ورزی یا طرز عمل کو قبول نہیں کیا جائے گا۔ ایسی کوئی بھی کوشش یا اقدام جس سے ایرانی حمایت یافتہ حوثی ملیشیا کو فائدہ ہو قابل قبول نہیں ہوگا۔

مملکت نے زور دے کر کہا ہے کہ یمن کو عدم استحکام سے دوچار کرنے کی کسی بھی کوشش سے مملکت اور خطے کی سلامتی اور استحکام کو خطرہ ہے۔ اس خطرے سے پوری قوت سے نمٹنے میں دریغ نہیں کریں گے۔