.

الضالع گورنری میں کمانڈروں سمیت دسیوں حوثی جنگجو ہلاک اور زخمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کی سرکاری فوج نے الضالع گورنری میں قعطبہ ڈاریکٹوریٹ میں ایک کارروائی کے دوران ایرانی حمایت یافتہ حوثی ملیشیا کے 2 کمانڈروں سمیت کئی جنگجو ہلاک اور زخمی ہوگئے۔

یمنی فوج کی سرکاری ویب سائٹ پر جاری ایک بیان میں بتایا گیا ہے کہ قعطبہ کے مغرب میں واقع حجر کے علاقے میں وادی الشجیب اور الریبی میں جھڑپوں کے دوران 2 حوثی کمانڈر اور کم سے کم 16 دیگر جنگجو ہلاک ہوگئے۔ کارروائی میں کئی حوثی باغی زخمی بھی ہوئے ہیں۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ اُنہوں نےحوثی ملیشیا کو پسپا کرتے ہوئے، انہیں دراندازی سے روکنے اور علاقے سے فرار پرمجبور کردیا۔

فوج کی طرف سے تصدیق کی گئی ہے کہ ان جھڑپوں کے نتیجے میں حوثیوں کا سرکردہ کمانڈر معمر السقاف اور عوض بدرالدین الکھالی اور 16 دیگر جنگجو ہلاک ہوگئے۔

اس سے قبل انسانی حقوق کی ایک حالیہ رپورٹ میں انکشاف کیا گیا تھا کہ ملیشیا نے گذشتہ دو ماہ کے دوران الضالع میں شہریوں کے خلاف ہزاروں خلاف ورزیاں اور جرائم کا ارتکاب کیا۔

الضاع کے میڈیا سنٹر کی طرف سے جاری کردہ رپورٹ کے مطابق باغیوں نے عام شہریوں کے حقوق کی 10123 خلاف ورزیاں کیں۔

اس رپورٹ کے مطابق مانیٹرنگ ٹیم نے 130 بچوں کی گرفتاریوں ، اغواء اور لاپتہ ہونے کی تصدیق کی۔ حوثیوں کے حملوں میں 10 بچے 40 خواتین زخمی ہوئیں جب کہ 22 خواتین اور 12 بچوں سمیت 272 زخمی ہوئے۔