.

حوثی ملیشیا نے وسطی یمن کے اہم قبائلی رہ نما کو قتل کرڈالا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں ایران نواز حوثی ملیشیا نے ملک کی وسطی گورنری اب میں المعزبہ کے علاقے الشرنمہ میں ایک کارروائی کے دوران سرکردہ قبائلی رہ نما کو قتل کرنے کے ساتھ ان کے گھر میں بڑے پیمانے پر لوٹ اور توڑ پھوڑ کی ہے۔

مقامی ذرائع نے بتایا کہ العود کے مقام پرمسلح ملیشیا نے العود قبیلے کے سربراہ الشیخ احمد مصلح الخضرمی کواغواء کیا جس کے بعد انہیں ایک دور ایک حراستی مرکز لے جایا گیا۔

مقامی ذرائع کا کہنا ہے کہ الخضرمی اور مسلح ملیشیا کے درمیان تلخ کلامی ہوئی جس پر حوثی باغیوں نے انہیں قتل کر دیا۔

مقامی ذرائع کا کہنا ہے کہ حوثی ملیشیا نے اس علاقے پر دھاوا بولتے ہوئے یہ دعویٰ کیا کہ انہوں نے یہ شادی پر ہوائی فائرنگ کرنے پر چھاپہ مارا ہے تاہم مقامی شہریوں نے حوثی ملیشیا کے دعوے کو بے بنیاد قرار دیا ہے اور کہا ہے کہ شادی کے موقع پر کسی قسم کی فائرنگ نہیں ہوئی ہے۔

مقامی قبائلی رہ نمائوں اور دیگر شخصیات نے الشیخ الخضرمی کے قتل کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے اس واقعے کی آزادانہ تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے۔ مقامی شہریوں کا کہنا ہے کہ حوثی ملیشیا نے وسطی یمن کی اب گورنری میں ایک کارروائی کے دوران تین دیگر نوجوانوں کو اغواء کرلیا۔