.

عرب لیگ کا لیبیا کے بحران کے حل کے لیے عرب ۔ یو این میکنزم پر زور

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عرب لیگ نے لیبیا میں بحران کے حل کے لیے عرب ممالک اور اقوام متحدہ کے مابین مشترکہ ہم آہنگی اور تعاون کو مضبوط بنانے کے ساتھ بحران کے حل کی خاطر ' یواین' ۔ عرب میکانزم' کے قیام پر زور دیا ہے۔

عرب لیگ کے سیکریٹری جنرل احمد ابوالغیط نے لیبیا کے دارالحکومت طرابلس کے ارد گرد ہونے والی لڑائی کو فوری طور پر بند کرنے اور لیبیا کے بحران کے حل کے جامع اور پائیدار سمجھوتے تک پہنچنے کے لیے اقوام متحدہ کے زیر اہتمام سیاسی عمل پر زور دیا ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ سات ماہ سے لیبیا کے دارالحکومت پر قبضے کے لیے دو گروپوں میں لڑائی جاری ہے۔ اب وقت آگیا ہے کہ اس لڑائی کو ختم کر کے مشترکہ سیاسی عمل کا آغاز کیا جائے اور یہ کام اقوام متحدہ اور عرب لیگ کی زیر نگرانی ہونا چاہیے۔

عرب لیگ کے جنرل سکریٹریٹ کے ایک باوثوق ذریعے کا کہنا ہے کہ لیبیا کی صورتحال کا کوئی فوجی حل نہیں ہے۔ ملک میں موجودہ بحران کے خاتمے کا ایک واحد راستہ سیاسی سمجھوتا ہے۔

لیبیا میں فوری جنگ بندی کا مطالبہ

ذرائع نے مصری میڈیا کو سمجھایا کہ عرب لیگ لیبیا میں جاری بحران کو ختم کرنے کے لیے اپنی مساعی تیز کرنے کے لیے کام کر رہی ہے۔ عرب لیگ کے 10 ستمبر کو وزارتی سطح کے اجلاس میں بھی لیبیا کے متحارب فریقین سے فوری طور پر جنگ بندی کا مطالبہ کیا گیا تھا۔ عرب لیگ لیبیا اور اس کے اداروں کی وحدت کی حامی ہے۔لیبیا کو موجودہ عبوری دور سے آگے بڑھنے کے لیےپارلیمانی اور صدارتی انتخابات کے لیے ماحول سازگار بنانے پر زور دیتی ہے۔

ابوغیط اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل انتونیو گوٹیرس کے ساتھ مشاورت کا سلسلہ جاری رکھے ہوئے ہیں۔