.

سعودی پراسیکیوٹر کی 'ٹویٹر' پر خلاف قانون مواد پوسٹ کرنے پرقانونی کارروائی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ہفتے کے روز سعودی پبلک پراسیکیوشن کے ایک سرکاری ذریعے نے بتایا کہ ایک شخص کو مائیکرو بلاگنگ ویب سائیٹ 'ٹویٹر'پر نظام میں خلل ڈالنے کا موجب بننے والا مواد پوسٹ کرنے کے الزام میں طلب کیا گیا ہے۔ اس کے خلاف فوج داری قانون کےتحت سخت کارروائی عمل میں لانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

ذرائع نے بتایا کہ سائبر کرائم کی روک تھام سے متعلق قانون کے آرٹیکل چھ کی دفعات کی روشنی میں اس شخص نے جو کچھ کیا اس پراس کی سخت باز پرس ہوگئی۔

پراسیکیوٹر جنرل کے ایک ذریعے نے بتایا کہ پبلک پراسیکیوشن اپنے آئینی اختیارات کو استعمال کرتے ہوئے نظام عام کی خلاف ورزی کرنے والے افراد کے خلاف قانونی کارروائی کا مجاز ہے۔ نظام عام میں خلل پیدا کرنا سوشل میڈیا پر شہری آزادیوں کے حقوق میں شامل نہیں۔ نظام کو نقصان پہنچانے کی کسی بھی کوشش کو ناکام بنایا جائے گا اور اس میں ملوث عناصر کے خلاف سخت قانونی کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔