.

شام میں کرد ملیشیا کے حملے میں پانچ ترک فوجی زخمی :وزارتِ دفاع

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام کے سرحدی قصبے راس العین کے نواح میں جمعرات کو کرد ملیشیا کے ایک حملے میں پانچ ترک فوجی زخمی ہوگئے ہیں۔

ترکی کی وزارت دفاع نے ایک بیان میں شامی جمہوری فورسز(ایس ڈی ایف) کے اس حملے کی تصدیق کی ہے اورکہا ہے کہ ترک فوجیوں کو نشانہ بنانے کے لیے ڈرونز ، مارٹر اور ہلکے ہتھیار استعمال کیے گئے ہیں۔

دوسری جانب کرد ملیشیا نے ترکی پر اس علاقے میں حملے کا الزام عاید کیا ہے لیکن ترک وزارت دفاع کا کہنا ہے کہ ان کی فورسز نے اپنے دفاع میں کرد جنگجوؤں پر جوابی حملہ کیا تھا۔

واضح رہے کہ ترکی اور شامی جمہوری فورسز کے درمیان اس وقت امریکا کی ثالثی میں طے شدہ جنگ بندی جاری ہے۔اس کی ابتدائی پانچ روزہ مدت گذشتہ منگل کو ختم ہوگئی تھی لیکن اس کے بعد ترکی نے شام کے شمال مشرقی علاقے میں کردوں کے خلاف اپنی فوجی کارروائی دوبارہ شروع نہ کرنے کا اعلان کیا ہے۔اس دوران میں فریقین نے ایک دوسرے پر جنگ بندی کی خلاف ورزیوں کے الزامات عاید کیے ہیں۔