.

عراقی حکومت نے ’’العربیہ‘‘ اور ’’الحدث‘‘ نیوز چینلز کو کام سے روک دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراقی حکومت نے دبئی سے عربی زبان میں نشریات پیش کرنے والے دو پین عرب نیوز چینلز ’’العربیہ‘‘ اور ’’الحدث‘‘ کو ملک میں کام کرنے سے روک دیا ہے۔ عراقی حکام نے دونوں چینلز کو یہ کہتے ہوئے کام سے روکا کہ ان کے پاس نیوز میڈیا کا اجازت نامہ نہیں ہے۔

اسی حکم نامے کو بنیاد پر عراقی پولیس فورس نے ’’العربیہ‘‘ اور ’’الحدث‘‘ کے نامہ نگاروں کو میڈیا کوریج سے روکا دیا ہے۔ یاد رہے کہ دونوں نیوز چینل پر پابندی کا فیصلہ ایک ایسے وقت سامنے آیا ہے کہ جب ’’العربیہ‘‘ اور ’’الحدث‘‘ سے عراقی شہروں میں جاری مظاہروں کی مسلسل کوریج کی جا رہی تھی۔

یاد رہے کہ دونوں چینلز پر عراقی صورتحال کی انتہائی متوازن رپورٹنگ کو یقینی بنایا جا رہا تھا۔ عراقی سیاست کے تمام سیٹک ہولڈرز کو بلا تحصیص اپنا موقف العربیہ اور الحدث پر پیش کرنے کا موقع دیا جاتا رہا ہے۔

بغداد میں ’’العربیہ‘‘ اور ’’الحدث‘‘ دفاتر پر حملے

یاد رہے کہ عراقی دارلحکومت بغداد میں نامعلوم مسلح نقاب پوشوں نے رواں مہینے کے آغاز میں ’’العربیہ‘‘ کے دفتر پر حملہ کیا۔

عراق میں ’’العربیہ‘‘ کے نامہ نگار کے مطابق کہ ان کے دفتر کو ماضی میں دھمکیاں ملتی رہی ہیں۔ دفتر کے حکام نے عراقی سیکیورٹی ذرائع سے رابطہ کر کے انہیں اپنے عملے کو ضروری پیشہ وارنہ آزادی اور تحفظ فراہم کرنے پر زور دیا تھا، جو کسی حد تک فراہم کیا جاتا رہا ہے، تاہم مظاہروں میں شدت کے بعد سیکیورٹی فراہم کرنے والے ادارے نے اپنا عملہ واپس بلوا لیا تھا۔