.

لبنان: جنوبی شہر صیدا میں مرکزی شاہراہوں کو بند کرنے والے متعدد مظاہرین گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لبنان کے جنوبی شہر صیدامیں فوج نے مرکزی شاہراہوں کو بند کرنے والے متعدد مظاہرین کو گرفتار کر لیا ہے۔

العربیہ کے نمایندے کی اطلاع کے مطابق فوج کی شاہراہیں کھلوانے کی کوشش کے دوران میں دو افرادزخمی ہوگئے ہیں۔ریڈکراس کا کہنا ہےکہ ان افراد کو ابتدائی طبی امداد کے بعد جانے کی اجازت دے دی گیہ ہے۔لبنانی حکام نے فوری طور پر گرفتار کیے گئے افراد کی تعداد نہیں بتائی ہے۔

لبنانی مظاہرین نے آج بھی دارالحکومت بیروت اور صیدا سمیت مختلف شہروں میں کاریں اور دیگر رکاوٹیں کھڑی کرکے سڑکیں بلاک کررکھی ہیں۔وہ حکمراں اشرافیہ کی بدعنوانیوں کے خلاف احتجاج کررہے ہیں اور ملک میں فرقہ وار بنیاد پر مروج سیاسی نظام میں اصلاحات کا مطالبہ کررہے ہیں۔

لبنانی وزیر دفاع الیاس بو ساب نے او ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ "فوج شاہراہوں پر موجود ہے لیکن وہ زبردستی شاہراہیں نہیں کھلوائے گی تاکہ شہریوں کے ساتھ جھڑپوں سے بچا جاسکے۔انھوں نے کہا کہ جو لوگ تشدد اور کشیدگی پردوسروں کو اکسا رہے ہیں، انھیں اس کی ذمے داری بھی قبول کرنی چاہیے۔"

ان کا کہنا تھا کہ" ہمیں سڑکوں کی بندش کا جلد حل نکالنا ہے اور اس بات کو بھی یقینی بنانا ہے کہ فوج کی مظاہرین کے ساتھ جھڑپیں نہ ہوں۔"

لبنان میں اس احتجاجی تحریک کا آج بارھواں روز ہے۔مظاہرین نے شہریوں پر زوردیا تھا کہ وہ اپنی کاروں سے مرکزی شاہراہوں کو بند کردیں۔العربیہ کے نمایندے نے بتایا کہ لبنانی فوجی کارمالکان سے سڑکوں پر کھڑی گاڑیوں کو ہٹانے کی اپیلیں کررہے تھے۔

حزب اللہ کے زیرانتظام المنار ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق مظاہرین نے طرابلس اور المینا میں بلدیہ کی عمارتوں اور شمالی لبنان میں واٹر اتھارٹی کے دفاتر کو بند کردیا ہے۔

دریں اثناء لبنان میں بنکوں کی تنظیم نے احتجاجی مظاہروں کے پیش نظر آج بنکوں کی بندش کا اعلان کیا ہے۔اس نے یہ فیصلہ ڈالر کی بڑھتی ہوئی مانگ کے پیش نظر بھی کیا ہے جبکہ ڈالر کے مقابلے میں لیرا کی قیمت مسلسل گرتی جارہی ہے۔بنکوں کے علاوہ اسکول اور بہت سے کاروباری ادارے بھی آج بند ہیں۔