.

ایرانی پولیس نے احتجاج کرنے والے 100 رہ نمائوں کو حراست میں لے لیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایرانی پولیس نے ملک میں حکومت مخالف مظاہروں کے خلاف کریک ڈائون کے دوران احتجاج کرنے والے 100 سرکردہ لیڈروں کو حراست میں لینے کا دعویٰ کیا ہے۔

ایرانی عدلیہ کے ترجمان نے ٹویٹر پر کہا کہ ایران کے سپاہ پاسداران انقلاب نے ملک بھر میں 100 مظاہرین لیڈروں کو گرفتار کیا ہے۔

"ایران انٹرنیشنل عربیبک" چینل کے مطابق جمعہ کے روز سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنی ای کے مندوب اور تہران کی جامع مسجد کے خطیب احمد خاتمی نے کہا ہے کہ پر امن احتجاج ہر ایک کا حق ہے اور کسی کو پرامن احتجاج سے نہیں روکا گیا۔ انہوں نے مظاہرین کے خلاف طاقت کے استعمال کی تردید کی اور کہا کہ مظاہرین کی آڑ میں ان کی صفوں میں موجود شرپسندوں کے خلاف کارروائی کی گئی جو احتجاج کی گاڑی میں سوار ہو کرملک کو نقصان پہنچانا چاہتے ہیں۔

انہوں نے اپنے خطبے کے دوران پرتشدد احتجاج کرنے والوں "دشمن" کے ایجنٹ قرار دیا اور کہا کہ اس احتجاج اور فسادات کی منصوبہ بندی تین سال کی گئی۔ فسادات کے لیے اندرون اور بیرون ملک لوگوں کو تربیت فراہم کی گئی۔

یہ دعویٰ اس وقت کیا گیا جب ایرانی عدالتی حکام نے مظاہرین کو "سخت" نوعیت کی پابندیوں میں جکڑنے کا عزم کیا ہے۔

ایرانی پاسداران انقلاب نے جمعہ کے روز اعتراف کیا کہ پہلے دن 28 صوبوں اور 100 شہروں میں مظاہرے ہوئے۔ ایرانی میڈیا نے پاسداران انقلاب کے نائب کمانڈر ان چیف کے حوالے سے بتایاکہ ہم 48 گھنٹوں کے اندر بدامنی روکنے میں کامیاب ہوگئے۔

ادھر ایران کے صوبہ اھواز میں انسانی حقوق کی عالمی تنظیم 'ہیومن رائٹس واچ' ایک گروپ نے ملک میں مظاہروں کے دوران طاقت کے استعمال کی تحقیقات کے لیے بین الاقوامی انکوائری کمیشن بھیجنے، حقائق تلاش کرنے اور قصورواروں کو انصاف کے کٹہرے میں لانے کا مطالبہ کیا ہے۔

تنظیم کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ایران میں احتجاجی مظاہروں کے آغاز سے ہی صوبہ اہواز کے قصبوں اور شہروں میں 60 سے زیادہ مظاہرین ہلاک ہوچکے ہیں۔

ہیومن رائٹس واچ نے بتایا کہ ایرانی حکام نے اہواز کو فوجی چھائونی میں تبدیل کر دیا ہے۔

تنظیم نے ایرانی حکومت کی زیادتیوں کی مذمت کی جس کے نتیجے میں قتل عام ہوا اورعالمی برادری سے مطالبہ کیا کہ وہ تہران پرہلاکتوں کے اصل اعدادو شمار سامنے لانے کے لیے دبائو ڈالے۔

ایران کی قومی مزاحمتی کونسل نے اپنی طرف سے ہلاک اور زخمی ہونے والے مظاہروں کے بارے میں رپورٹ بتایا کہ ان مظاہروں کے نتیجے میں 20 شہروں میں 251 اموات ہوئیں جب کہ سیکیورٹی فورسز کے حملوں میں 3700 افراد زخمی ہوئے ہیں۔

مزاحمتی کونسل نے تصدیق کی ہے کہ سیکیورٹی فورسز نے 7000 افراد کو گرفتار کیا ہے۔ تشدد کے دوران ایک 13 سالہ بچے کو بھی گولیاں مار کر قتل کر دیا گیا۔

خیال رہے کہ ایران میں گذشتہ ہفتے اس وقت ملک گیر احتجاج کی لہر اٹھ کھڑی ہوئی تھی جب حکومت نے پٹرولیم مصوعات کی قیموں میں دو سو فی صد اضافہ کردیا تھا۔