.

سعودی ڈرائیونگ اسکول میں لائسنس کے لیے 21 ہزار خواتین کی درخواستیں

القصیم یونیورسٹی سے خواتین امیدواروں کے ڈرائیونگ لائسنس کا اجراء موخر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی القسیم یونیورسٹی کے زیرانتظام ڈرائیونگ اسکول کی انتظامیہ کا کہنا ہےکہ ڈرائیونگ لائسنس کے حصول کے لیے بڑی تعداد میں خواتین کی درخواستوں کے بعد لائسنس کا اجراء عارضی طور پرروک دیا گیا ہے۔

یونیورسٹی کے ترجمان ڈاکٹر ابراہیم الدغیری کا کہنا ہے کہ گذشتہ کچھ عرصے کے دوران 21 ہزار خواتین نے ڈرائیونگ اسکول میں ڈرائیونگ کورس میں داخلہ کیا۔ دیگر وجوہات میں بڑی تعداد میں خواتین کا ڈرائیونگ اسکول میں داخلہ لینا بھی شامل ہے۔

ایک سوال کے جواب میں الدغیری کا کہنا تھا کہ ہرماہ ڈرائیونگ کی تربیت اور لائسنس کے حصول کے لیے خواتین امیدواروں کی تعداد میں اضافہ ہو رہا ہے اور ہر ماہ 2 ہزار سے زاید خواتین ڈرائیونگ اسکول میں داخلہ لے رہی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ڈرائیونگ کے لیے مسلسل 24 گھنٹے 12 دن تک کا کورس مکمل کرنا ضروری ہے۔ ہرامیدوار کے لیے ایک ڈرائیونگ خاتون انسٹرکٹر کا ہونا ضروری ہے اور ڈرائیونگ اسکول میں فی الحال انسٹرکٹرز کی تعداد بہت کم ہے۔

ایک دوسرے سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ گرائونڈ میں ایک امیدوار کے لیے ڈرائیونگ سیکھتے ہوئے 833 مربع میٹر جگہ ضروری ہے۔ گذشتہ چھ ماہ کے دوران ڈرائیونگ کورس اور لائسنس کے حصول کے لیے امیدواروں کی تعداد میں اضافے کی وجہ سے اسٹاف میں 300 فی صد اضافہ کیا ہے۔ ڈرائیونگ اسکول کی طرف سے بہترین اور معیاری تربیت فراہم کی جا رہی ہے۔