بین المذاہب مکالمے کی تاریخ میں نوجوان گریجویٹس کا سب سے بڑا دستہ فارغ التحصیل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

آسٹریا کے دارالحکومت ویانا میں "شاہ عبدالله عالمی مرکز برائے بین المذاہب و بین الثقافتی مکالمہ" کے زیر انتظام بین الاقوامی KAICIID فیلو شپ پروگرام کے پانچویں دستے کی گریجویشن تقریب آج جمعرات کے روز ہو رہی ہے۔ ویانا کے پلاٹینیم ہال میں منعقد ہونے والی تقریب میں 35 ممالک سے تعلق رکھنے والے گریجویٹس شریک ہوں گے۔ مذکورہ فیلو شپ پروگرام کا مقصد مکالمے کی ثقافت کو مضبوط بنانا، باہمی بقاء اور احترام کی اقدار کو راسخ کرنا ، تعددیت کو قبول کرنا اور مشترکہ ہم وطنیت کی حمایت کرنا ہے۔

سعودی پریس ایجنسی SPA کے مطابق فیلو شپ پروگرام کے نئے دستے نے ایک سال کا تربیتی کورس مکمل کیا ہے۔ اب تک شاہ عبداللہ مرکز سے فارغ التحصیل ہونے والے گریجویٹس کی مجموعی تعداد 279 ہے۔ ان گریجویٹس کا تعلق 59 ممالک اور 9 مختلف مذاہب سے ہے۔ فیلو شپ پروگرام میں باقاعدہ تربیتی حلقے، مشترکہ مکالمے، مختلف مذہبی مقامات کے دورے اور شرکاء کے مقامی معاشروں میں مکالمے کے لیے زمینی منصوبوں کی تیاری شامل ہے۔

آج ہونے والے گریجویشن تقریب میں 220 سے زیادہ مہمان شخصیات شرکت کریں گی۔ ان میں سفارتی نمائندے، مذہبی رہ نما، سول سوسائٹی کے اداروں کے نمائندے اور گذشتہ برسوں کے دوران فیلو شپ پروگرام کے فارغ التحصیل متعدد گریجویٹس بھی شامل ہیں۔

بین الاقوامی فیلو شپ پرگروام نے نوجوانوں کے حلقوں میں مثبت نتائج حاصل کیے ہیں۔ اس پروگرام نے مکالمے کی مہارت کو پروان چڑھانے، باہمی بقاء اور رابطوں، امن کے قیام، تعمیری نوعیت کی تنقیدی فکر کو مضبوط بنانے اور جان کاری اور ثقافت سے متعلق پُلوں کی تعمیر کے میدان میں عمل درامد کے حوالے سے بین الاقوامی سطح پر مقبولیت اور اعتراف کی سند حاصل کی۔

گریجویشن تقریب میں "شاہ عبدالله عالمی مرکز برائے بین المذاہب و بین الثقافتی مکالمہ" کے سکریٹری جنرل فیصل بن معمر مجلس عاملہ کے دیگر ارکان کی شرکت کے ساتھ فارغ التحصیل افراد میں سرٹفکیٹس تقسیم کریں گے۔ مجلس عاملہ کے ارکان کا تعلق اسلام، نصرانیت، یہودیت، بدھ مت اور ہندو مذہب سے ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں