ادلب میں اسدی فوج اور باغیوں میں لڑائی، 26 افرا د ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

شام میں انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والے گروپ کے مطابق شورش زدہ علاقے ادلب میں صدر بشارالاسد کی وفادار فوج اور مسلح گروپوں کےدرمیان ہونے والی لڑائی میں کم سے کم 26 افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

انسانی حقوق کی صورت حال پرنظر رکھنے والے ادارے'سیرین آبرز ویٹری' کے مطابق تحریر الشام اور دیگر عسکری گروپوں اور اسدی فوج کے درمیان جنوب مشرقی ادلب میں ہونے والی خون ریز لڑائی میں دونوں طرف سے بھاری جانی نقصان کی تصدیق کی گئی ہے۔

انسانی حقوق گروپ کا کہنا ہے کہ اسدی فوج اور جنگجوئوں میں لڑائی اس وقت شروع ہوئی جب سرکاری فوج نے ایک ویران فوجی کیمپ کا قبضہ حاصل کرنے کی کوشش کی۔

لڑائی میں دسیوں میزائل اور راکٹ استعمال کیے گئے۔ لڑائی کا مرکز تل السطان، زمار اور جزاریا کے علاقے اور حلب کے بعض مقامات بھی شامل تھے۔ لڑائی کے نتیجے میں اسدی فوج کے 7 اہلکار ہلاک ہوئے ہیں جب کہ باغیوں نے اپنے چار عناصر کی ہلاکت کی تصدیق کی ہے۔ انسانی حقوق گروپ نے لڑائی میں مزید 15 افراد کے مارے جانے کی تصدیق کی ہے۔

ادھر ایک دوسری پیش رفت میں دارالحکومت دمشق کے قریب دوما شہر میں بدھ کے روز نامعلوم مسلح افراد نے اسدی فوج پر حملہ کردیا جس کے نتیجے میں متعدد اہلکار ہلاک اور زخمی ہوئےہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں