عرب لیگ نے لیبیا اور یمن میں غیر ملکی مداخلت سے خبردار کر دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

عرب لیگ کے سکریٹری جنرل احمد ابو الغیط کا نے لیبیا اور یمن کے بحرانوں میں غیر عرب ممالک کی مداخلت کے خطرے کو باور کراتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ لیبیا میں جارحیت کو روک کر سیاسی حل کی جانب واپس لوٹا جائے۔

ابو الغیط نے لیبیا میں بالخصوص دارالحکومت طرابلس کے اطراف خطرناک جارحیت کی صورت حال کو پریشان کن قرار دیا۔ اس کے نتیجے میں لیبیا کے بحران کے مربوط سیاسی تصفیے تک پہنچنے کے لیے جاری عرب اور بین الاقوامی کوششیں پیچیدگی کا شکار ہو گئی ہیں۔

عرب لیگ کے جنرل سکریٹریٹ کے ایک ذمے دار ذریعے کے بیان کے مطابق ابو الغیط نے لیبیا میں تمام فریقوں پر زور دیا کہ وہ فوری طور پر جارحیت میں کمی لائیں، فائر بندی کے لیے متفقہ اقدامات کو یقینی بنائیں اور سیاسی عمل کو دوبارہ شروع کریں۔

ذریعے نے مزید بتایا کہ ابو الغیط نے ایک بار پھر تاکید کی ہے کہ عرب لیگ ،،، لیبیا کے اندرونی معاملات میں بیرونی مداخلت کی تمام صورتوں کو مسترد کرتی ہے۔ اس لیے کہ ان مداخلتوں کا نتیجہ تنازع کو طول دینے اور لیبیا کے عوام کی مشکلات میں اضافے کی صورت میں سامنے آئے گا۔ مزید یہ کہ ان مداخلتوں سے اُن سفارتی کوششوں میں پیچیدگی پیدا ہو گی جو اقوام متحدہ کی سرپرستی میں بحران کے پر امن حل کے واسطے کی جا رہی ہیں۔

احمد ابو الغیط نے ایک بار پھر یہ موقف دہرایا کہ عرب لیگ لیبیا کے بحران کے تصفیے کے واسطے لیگ کی کونسل کی قرار دادوں کے مطابق اپنی کوششیں جاری رکھے گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں