عراق: کرکوک میں فوجی اڈے پر حملے میں امریکی ٹھیکیدار ہلاک، متعدد زخمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

شمالی عراق کے شہر کرکوک میں واقع امریکی فوجی اڈے کو میزائل حملے سے نشانہ بنایا گیا ہے جس کے نتیجے میں ایک امریکی ٹھیکیدار ہلاک اور متعدد زخمی ہوگئے ہیں۔

جمعہ کے روز 'داعش' کے خلاف قائم عالمی اتحادی فوج کی طرف سے جاری ایک بیان میں بتایا کہ کرکوک میں فوجی اڈے پر میزائل حملے میں ایک امریکی شہری ٹھیکیدار ہلاک اور متعدد امریکی فوجی اور عراقی اہلکار زخمی ہو گئے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ اتحادی فوج نے جوابی کارروائی کے ساتھ اس واقعے کی تحقیقات شروع کردی ہیں۔

عراقی فوج نے ایک مختصر بیان میں بتایا کہ جمعہ کی شام کرکوک شہر کے قریب کے امریکی فوجی اڈے پر کئی گولے گرے جس کے نتیجے میں وہاں پر جانی نقصان ہوا ہے۔ اس فوجی اڈے پر امریکی اور عراقی فوجی موجود تھے۔ تاہم عراقی فوج نے اس واقعے کی مزید تفصیلات نہیں بتائیں۔

ذرائع نے بتایا ہے کہ سیکیورٹی فورسز کو اڈے کے قریب ایک ایک خالی گاڑی میں کاتیوشا راکٹ لانچر ملا۔ کسی گروپ نے اس حملے کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے۔

سیکیورٹی ذرائع نے بتایا کہ اس اڈے شہر سے 15 کلومیٹر شمال مغرب میں واقع اڈے میں امریکی فوج، عراق کی وفاقی پولیس اور انسداد دہشت گردی فورس کے اہلکارں کی بڑی تعداد موجود ہے۔

آئی ایس آئی ایس کے کارکن خطے میں سرگرم عمل ہیں اور وہ بغداد میں حکومت گرانے کی خاطر گوریلا حربے استعمال کرتے ہیں کیونکہ اس نے دسمبر 2017 میں اپنے زیر کنٹرول تمام علاقوں پر دوبارہ قبضہ کیا تھا اور فتح کا اعلان کیا تھا۔

دسمبر 2017ء کو 'داعش' کی عراق میں شکست کے بعد اب داعش سے تعلق رکھنے والے جنگجو اس علاقے میں عراقی حکومت ختم کرنے کے لیے گوریلا کارروائیاں کر رہے ہیں۔ حال ہی ایک امریکی عسکری عہدیدار نے کہا تھا کہ عراق میں موجود فوجی اڈوں کو ایرانی حمایت یافتہ ملیشیائوں کی طرف سے حملوں کا سامنا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں