.

بغداد میں امریکی فوجی اڈے پر 4 میزائل حملے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی فوج کی طرف سے عراق اور شام میں ایرانی حمایت یافتہ گروپوں کے ٹھکانوں پر بمباری کے بعد بغداد کےقریب ایک فوجی اڈے پر چار میزائل داغے جانے کی اطلاعات ہیں تاہم ان حملوں میں کسی قسم کے جانی نقصان کی اطلاع نہیں ملی۔

خبر رساں ادارے'اے ایف پی' نے اطلاع دی ہےکہ شام اور الانبارمیں عراقی حزب اللہ ملیشیا کے 5 ٹھکانوں پر امریکی بمباری کے نتیجے میں ہلاکتوں کی تعداد 15 ہو گئی ہے۔

عراق میں العربیہ کے نمائندے نے اطلاع دی ہے کہ عراقی حزب اللہ کے ٹھکانوں پرامریکی حملوں کے نتیجے میں 41 ایرانی اور 25 عراقی جنگجو ہلاک ہوئے ہیں۔

امریکی محکمہ دفاع پینٹاگان نے اعلان کیا کہ امریکی طیاروں نے عراقی حزب اللہ ملیشیا کے صدر دفاتر پر بمباری جس کے نتیجے میں ملیشیا کے رہنما ابوعلی خزعلی سمیت دسیوں جنگجو ہلاک اور زخمی ہوگئے۔

ایک امریکی فوجی ذرائع کے مطابق آپریشن میں امریکی ایف 15 طیاروں کو استعمال کیا گیا۔ عراق میں حزب اللہ ملیشیا کے تین اور شام میں دو اڈوں کو نشانہ بنایا گیا۔

ابتدائی نتائج میں عراقی حزب اللہ کے ٹھکانوں کو نشانہ بناتے ہوئے امریکی بمباری کے نتیجے میں 10 افراد ہلاک اور 14 زخمی ہوگئے۔

امریکی فوج کے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ عراقی حزب اللہ کی نشانہ بننے والی پانچ تنصیبات میں اسلحہ کے گودام اور کمانڈ اینڈ کنٹرول مراکز شامل ہیں۔

پینٹاگان نے بتایا کہ یہ حملے عراق میں ایک امریکی دفاعی ٹھیکیدار کی ہلاکت کے ردعمل میں ہوئے ہیں۔

وزارت دفاع کی سرکاری ویب سائٹ کے ذریعہ اسسٹنٹ سکریٹری برائے دفاع جوناتھن ہوفمین نے ایک بیان میں کہا کہ حزب اللہ بریگیڈ کے مراکزپر امریکی حملےعراق میں اتحادی فوج پر بار بارحملوں کا رد عمل ہے۔