.

عراق : ناصریہ میں عراقی سیکورٹی فورسز اور مظاہرین کے درمیان تصادم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراقی خبر رساں ایجنسی کے مطابق جنوبی شہر ناصریہ میں الحبوبی اسکوائر پر دھرنا دینے والے افراد بدستور موجود ہیں جب کہ مظاہرین نے ذی قار صوبے میں متعدد پُلوں کو بند کر دیا ہے۔

آج اتوار کے روز ایک عراقی سیکورٹی ذریعے نے بتایا کہ ناصریہ شہر کے وسط میں سیکورٹی فورسز اور مظاہرین کے درمیان تصادم ہوا۔ اس دوران سیکورٹی فورسز نے آنسو گیس کے گولے داغے جس کے نتیجے میں کئی افراد دم گھٹنے کا شکار ہو گئے۔ ان میں سے بعض افراد کو علاج کے لیے قریبی واقع ہسپتال منتقل کر دیا گیا۔

اس سے قبل العربیہ اور الحدث نیوز چینلوں کے نمائندے نے بتایا تھا کہ سیکورٹی فورسز نے ہفتے کی صبح جنوبی شہر بصرہ میں دھرنے کے مقام پر دھاوا بول کر ام بروم اسکوائر پر نصب مظاہرین کے خیموں کو اکھاڑ دیا۔ اس دوران التمیمیہ کے علاقے میں مظاہرین پر لاٹھی چارج کیا گیا اور متعدد کو گرفتار کر لیا گیا۔ سیکورٹی فورسز نے مظاہرین کا گھیراؤ بھی کر لیا۔

خیال رہے کہ رواں ماہ 20 جنوری کے بعد عراق میں ہونے والے احتجاجی مظاہروں میں ایک بارپھر سیکورٹی فورسز اور مظاہرین کے درمیان تصادم کے واقعات میں اضافہ ہوا ہے۔ حالیہ ایام میں ہونے والے پرتشدد مظاہرین میں ایک درجن سے زائد افراد ہلاک ہوچکے ہیں جب کہ گذشتہ برس اکتوبر سے جاری احتجاج میں سیکڑوں افراد کے مارے جانے کی تصدیق کی گئی ہے۔