ایردوآن مجھے "ہٹلر" کا نام دیتے ہیں اور اسرائیل سے تجارت بھی مضبوط بنا رہے ہیں: نیتن یاہو

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

اسرائیلی وزیراعظم بنیامین نیتن یاہو نے اپنے حوالے سے ترک صدر رجب طیب ایردوآن کے اعلانیہ مواقف کا تمسخر اڑایا ہے جب کہ دونوں ملکوں کے درمیان تجارتی تعلقات کے میدان میں یہ مواقف یکسر مختلف ہیں۔

اسرائیلی اخبار یروشلم پوسٹ کے مطابق نیتن یاہو نے بدھ کے روز لیکوڈ پارٹی کے ارکان سے ملاقات کے دوران کہا کہ وہ شاید "واحد اسرائیلی ہیں جو ترکی کا سفر نہیں کرتے"۔

نیتن یاہو نے مزید کہا کہ "صدر ایردوآن کی عادت بن گئی کہ وہ ہر 3 گھنٹوں میں مجھے ہٹلر قرار دینے لگے .. اب وہ ہر 6 گھنٹوں میں ایسا کر رہے ہیں تاہم خدا کا شکر ہے کہ (ترکی اور اسرائیل کے درمیان) تجارت سرگرم ہے!".

ترکی کے صدر رجب طیب ایردوآن نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے اعلان کردہ اسرائیلی فلسطینی امن منصوبے پر سرزنش کرتے ہوئے کہا تھا کہ "یہ منصوبہ ہر گز امن کے کام نہ آئے گا اور نہ کوئی حل ساتھ لائے گا"۔ ترکی کی سرکاری خبر رساں ایجنسی "اناضول" کے مطابق ایردوآن کا مزید کہنا تھا کہ بنیادی طور پر یہ "فلسطینیوں کے حقوق کو نظر انداز کرنے اور اسرائیلی قبضے کو قانونی حیثیت دینے کا منصوبہ ہے"۔

مقبول خبریں اہم خبریں