متحدہ عرب امارات میں کرونا وائرس کا شکار خاتون مکمل صحت یاب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

متحدہ عرب امارات کی وزارت صحت نے اتوار کے روز ملک میں نئے کرونا وائرس کے پہلے کیس کے ایک چینی مریضہ کے مکمل طور پر تندرست ہونے کا اعلان کیا ہے۔

اماراتی وزارت نےکہا ہے کہ وائرس سے صحت یاب ہونے والی مریضہ چین سے تعلق رکھتی ہے۔ اسے گذشتہ ماہ کے آخر میں اس مرض میں مبتلا قرار دیا گیا اور امارات میں اس کا علاج کیا جا رہا تھا۔

صحت یاب ہونے والی چینی خاتون شہری 'لیو یوجیا' نے امارات کی طرف سے علاج میں ہر ممکن سہولت فراہم کرنے کے لیے ابوظبی کا شکریہ ادا کیا ۔ اس نے کہا کہ متحدہ عرب امارات نے اسے اور کنبہ کے تمام افراد کو جو کچھ فراہم کیا وہ اس کا اظہار ہے امارات کی سرزمین پر رہنے والا ہر شخص یہاں‌کی حکومت کی لطف وعنایات سے بہرہ مند ہو رہا ہے۔

امارات میں چین کے قونصل جنرل 'لی ژیونگ' نے بھی کروناوائرس سے متاثرہ چینی شہری کے علاج میں ہرممکن مدد اور سہولت فراہم کرنے پر امارات حکومت کا شکریہ ادا کیا۔ انہوں نے کہا کہ متحدہ عرب امارات کی قیادت ، حکومت اور لوگوں نے اس بیماری کے مقابلہ میں چین کے ساتھ یکجہتی کا جو مظاہرہ کیا ہے ، اس نے دونوں دوست ممالک کے درمیان اسٹریٹجک تعلقات کو اور بھی گہرا کردیا ہے۔ انہوں نے متحدہ عرب امارات میں اس مرض کے پہلے کیس میں مریض کی صحت یابی پر خوشی کا اظہار کیا ہے۔

چینی خاتون شہری کا علاج کرنے والے اماراتی ڈاکٹر حسین عبد الرحمٰن الرند نے کہا کہ چینی خاتون کے میڈیکل ٹیسٹوں سے یہ واضح‌ہو رہاہے کہ ان میں کرونا وائرس کا کوئی اثر باقی نہیں رہا ہے۔

ڈاکٹر حسین الرند نے کہا کہ کہ چینی خاتون کی صحت یابی سے یہ امید کی جاسکتی ہے کہ اس طرح کے امراض کے علاج کے لیے مملکت میں سہولت موجود ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ امارات نے کرونا وائرس سے نمٹنے کے لیے ہرممکن طریقہ علاج اپنانےکا فیصلہ کیا ہے۔

خیال رہے کہ چین سے پھوٹنے والے کرونا وائرس کے نتیجے میں چند ہفتوں میں ایک ہزار کے قریب جاں بحق اور ہزاروں کی تعداد میں متاثر ہوئے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں