.

یمن کے علاقے الجوف سے زخمیوں کی علاج کے لیے سعودی عرب منتقلی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کے علاقے الجوف میں لڑائی کےدوران زخمی ہونے والے شہریوں‌کو علاج کے لیے سعودی عرب کے اسپتالوں میں منتقل کیا گیا ہے۔

العربیہ اور الحدث ٹی وی چینلوں کی رپورٹ کے مطابق یمن کے علاقے الجوف سے سعودی عرب کے اسپتالوں میں لائے گئے زخمیوں‌کو علاج کی بہترین اور معیاری سہولیات فراہم کی جا رہی ہیں۔

یمن میں آئینی حکومت کی معاون عرب اتحادی فوج کے ترجمان کرنل ترکی المالکی نے گذشتہ روز بتایا کہ الجوف میں ٹورینڈو طیارے کے حادثے کے نتیجے میں زخمی ہونے والے افراد کو سعودی عرب کے اسپتالوں میں منتقل کیا گیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ریسکیو ٹیمیں بھی علاقے میں پہنچا دی گئی ہیں جو زخمیوں کو وہاں سےنکالنے میں مدد کررہی ہیں۔

قبل ازیں عرب اتحاد نے حوثی ملیشیا کے خلاف الجوف میں کارروائی کے دوران سعودی عرب کا ایک جنگی طیارے تباہ ہونے کی تصدیق کی تھی۔

المالکی نے کہا کہ الجوف میں شہریوں کو ہونے والے جانی نقصان کی تمام تر ذمہ داری حوثی ملیشیا پر عاید ہوتی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ الجوف میں تباہ ہونے والےطیارے کے عملے کی زندگی اور ان کی سلامتی کی ذمہ داری حوثی باغیوں پر عاید ہوتی ہے۔ باغیوں کو اس حوالے سے عالمی قوانین کی پابندی کرنا ہوگی۔

ایک سوال کے جواب میں کرنل المالکی نے کہا تھا کہ طیارے کے حادثے کےوقت اس میں عملے کےدو ارکان سوار تھے۔ مگر انہوں‌ حفاظتی کرسیوں اور پیراشوٹ کی مدد سے کود گئے تھے۔ انہوں‌نے کہا کہ حوثی ملیشیا کی طرف سے طیارے کے عملے پر فائرنگ کرنا بین الاقوامی قوانین کی کھلی خلاف ورزی ہے۔