.

مصر:پائلٹ کو برطرف کرانے کا موجب بننے والے فن کار پرمقدمہ

سبکدوش مصری پائلٹ کا فن کارکے خلاف 25 ملین پائونڈ ہرجانے کا دعویٰ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر کی ایک صارف عدالت نے جہاز کے کاک پٹ میں غیرقانونی طورپر داخل ہونے کے الزام میں ایک مقامی فن کار محمد رمضان کے کیس کی سماعت 26 فروری تک ملتوی کردی ہے۔ دوسری طرف مقدمے کے فریق اور سبکدوش پائلٹ اشرف ابو الیسر نے کاک پٹ میں غیرقانونی طور پر گھسنے کے الزام میں فن کار محمد رمضان سے 25 ملین پائونڈ ہرجانہ ادا کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ‌ کے مطابق فن کار محمد رمضان اور پائلٹ اشرف ابو الیسر اس وقت منظر عام پرآئے ایک ویڈیو وائرل ہوئی جس میں فن کار محمد رمضان کو دوران پرواز طیارے کے کاک پٹ میں دیکھا گیا۔ ویڈیو میں ایسے لگ رہا ہے گویا وہ طیارے کو اڑا رہےہیں۔ یہ ویڈیو اس وقت بنائی گئی جب ہوائی جہاز مصر سے سعودی عرب جا رہا تھا۔ اس طیارے کو ہوا باز اشرف ابو الیسر اڑا رہے تھے۔ ویڈیو سامنے آنے کے بعد مصری حکومت اور سول ایوی ایشن اتھارٹی نے پائلٹ کالائنسنس ضبط کرکے اسے ملازمت سے تا حیات فارغ کردیا تھا جب کہ فن کار کے خلاف بھی صارف عدالت میں غیرقانونی طورپر جہاز کے کاک پٹ میں گھسنے کے الزام میں مقدمہ چلایا جا رہا ہے۔

مدعی پائلٹ نے کہا ہے کہ فن کار محمد رمضان نے اپنی شہرت کے لیے جہاز کے کاک پٹ میں گھس کر ویڈیو بنائی جس کے نتیجے میں ان (اشرف ابو ایسر( کی ساکھ کونقصان پہنچنے کے ساتھ انہیں مالی طور پربھی بہت نقصان اٹھانا پڑا ہے۔ صارف عدالت نے 26 فروری کو مدعی یا اس کے وکیل میں سے کسی ایک کو پیش ہونے کو کہا ہے۔ اسی حوالے سے کچھ دوسری ویڈیوز بھی سامنے آئی ہیں۔ ایک فوٹیج میں فن کار محمد رمضان یہ دعویٰ‌کررہےہیں کہ ہواباز ابو یسر نےکاک پٹ میں داخل ہونے کے بدلے میں ان سے 9 لاکھ پائونڈ کی رقم مانگی تھی تاہم ابو الیسر نے اس کی تردید کی ہے۔