.

ادلب میں شامی فوج کے ساتھ لڑائی میں مزید تین ترک فوجی ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام کے شمال مغربی صوبہ ادلب میں صدر بشارالاسد کی وفادار فوج کے خلاف لڑائی میں مزید تین ترک فوجی ہلاک ہوگئے ہیں۔

ترک صدر رجب طیب ایردوآن نے جمعرات کو ایک نشری تقریر میں ان فوجیوں کی ہلاکتوں کی اطلاع دی ہے۔ انھوں نے کہا’’ ہمارے تین جوان شہید ہوئے ہیں، اللہ انھیں جوار رحمت میں جگہ دے لیکن دوسری جانب شامی نظام کا بھی بھاری جانی نقصان ہوا ہے۔‘‘

ادلب میں شامی فوج کے خلاف لڑائی میں اس ماہ کے دوران میں اب تک اکیس ترک فوجی مارے جا چکے ہیں۔ شامی فوج اپنے اتحادی روس کی فضائیہ کی مدد سے ادلب پر دوبارہ کنٹرول کے لیے فیصلہ کن لڑائی لڑرہی ہے اور اس نے گذشتہ چند ہفتوں کے دوران میں اس صوبے میں متعدد قصبوں اور دیہات پر دوبارہ کنٹرول حاصل کر لیا ہے۔

ادلب میں ترک فوج شام کے باغی گروپوں کی حمایت کررہی ہے۔ روس اور شامی فوج کے لڑاکا طیاروں نے القاعدہ سے ماضی میں وابستہ جنگجو گروپ اور اس کے اتحادیوں کے زیر قبضہ رہ جانے والے اس صوبے کے مختلف علاقوں پرفضائی حملے بھی جاری رکھے ہوئے ہیں۔اس لڑائی کے نتیجے میں صوبہ ادلب اور اس سے ملحقہ حلب کے علاقوں سے کم سے کم دس لاکھ شامی بے گھر ہوگئے ہیں۔