.

عراق میں کرونا وائرس سے پہلی ہلاکت ، مزید تین کیسوں کی تصدیق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق نے کرونا وائرس سے ایک ضعیف العمر شخص کی موت کی اطلاع دی ہے۔اس مہلک وائرس سے عراق میں یہ پہلی ہلاکت ہے۔متوفیٰ کا تعلق کرد اکثریتی صوبہ سلیمانیہ سے تھا۔

اس ہلاکت کے بعد عراق کی جنرل اتھارٹی برائے اسلامی امور اور اوقاف نے کرونا وائرس سے بچاؤ اور اس کو پھیلنے سے روکنے کے لیے صوبہ سلیمانیہ میں تمام اجتماعی عبادات کو منسوخ کردیا ہے۔

عراق کی وزارتِ صحت نے بدھ کو کرونا وائرس کے تین نئے کیسوں کی بھی تصدیق کی ہے۔ان میں دو کا تعلق صوبہ دیالا اور ایک کا نجف سے ہے۔ عراق نے اب تک کرونا وائرس کا شکار ہونے والے پینتیس کیسوں کی تصدیق کی ہے ۔ان میں ایک ایرانی طالب علم بھی تھا اور اس کو اس کے آبائی وطن میں واپس بھیجا جاچکا ہے۔

دریں اثناءعراق کی بارڈر پورٹس اتھارٹی نے بیرون ملک رہنے والے شہریوں کی وطن واپسی اوردو ہمسایہ ممالک ایران اور کویت سے تجارت کے تبادلے کے لیے بعض فیصلوں کا اعلان کیا ہے۔

اس نے کہا ہے کہ عراق اور اس کے ہمسایہ مذکورہ دونوں ممالک کے درمیان 8 مارچ کو تجارتی اشیاء کے تبادلے کا آغاز ہوگا اور یہ سلسلہ 15 مارچ تک جاری رہے گا۔

اتھارٹی کے مطابق ایران میں مقیم عراقی شہری 15 مارچ تک بغداد اور بصرہ کے بین الاقوامی ہوائی اڈوں کے ذریعے وطن واپس آسکتے ہیں۔

واضح رہے کہ عراق میں کرونا وائرس کا شکار ہونے والے تیس افراد نے حال ہی میں ایران کا سفر کیا تھا اور وہیں سے وہ اس بیماری کو ساتھ لے کر وطن لوٹے تھے۔عراقی حکام نے باقی چار افراد کے بارے میں ابھی مزید تفصیل جاری نہیں کی ہے۔