.

لبنان: طبی عملہ کے 10 ارکان کرونا کا شکار، جمعہ اورپنج وقتہ باجماعت نمازموقوف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لبنان میں کرونا وائرس کی وبا نے طبی عملہ کے 10 ارکان کو اپنی لپیٹ میں لے لیا ہے۔ حکومت نے اس مہلک وبا سے بچاؤ کے لیے مزید حفاظتی انتظامات کا اعلان کیا ہے۔ ملک کی سپریم شیعہ اسلامی کونسل نے کرونا کی وجہ سے نماز جمعہ کے اجتماعات اور مساجد میں با جماعت نمازوں کی ادائی روکنے کا اعلان کیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق لبنان کی جبل گورنری کے علاقے جبیل میں قائم ایک اسپتال کے عملہ کے 10 ارکان میں کرونا وائرس کی موجودگی کی تصدیق کی گئی ہے۔

لبنانی محکمہ صحت کے حکام کا کہنا ہے کہ کرونا وائرس کا شکار ہونےوالے طبی عملہ ارکان کی حالت فی الحال خطرے سے باہر ہے۔ یہ تمام افراد اس سے قبل کرونا کا شکار ہونے والے عام مریضوں کی دیکھ بھال کررہے تھے۔ انھیں میڈیکل نرسنگ ٹیم اور اسپتال کے دوسرے عملہ سے الگ تھلگ کردیا گیا ہے۔

ایک دوسری پیش رفت میں لبنانی وزیراعظم حسان دیاب نے کرونا وائرس کے خطرے کے پیش نظر اٹلی، جنوبی کوریا اور ایران کے لیے پروازیں منسوخ کردی ہیں جب کہ چین کے لیے لبنان پہلے ہی پروازیں منسوخ کر چکا ہے۔

لبنان میں بدھ کو کرونا وائرس کا شکار ہونے والا ایک اور مریض چل بسا جس کے بعد لبنان میں کرونا سے ہلاک ہونے والے افراد کی تعداد دو ہوگئی ہے جب کہ کل متاثرہ کیسوں کی تعداد 61 بتائی جاتی ہے۔ محکمہ صحت کا کہنا ہے کہ گذشتہ روز فوت ہونے والا 55 سالہ شخص لبنانی ہے اور وہ ملک کے اندر کروناوائرس کاشکار ہونے والے افراد سے متاثر ہوا تھا۔