.

یمن اس وقت نازک موڑ پر کھڑا ہے: مارٹن گریفتھس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کے لیے اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی مارٹن گریفتھس نے خبردار کیا ہے کہ ملک میں عسکری صورت حال مسلسل "خوف ناک" ہوتی جا رہی ہے۔ گریفتھس کے مطابق یمن کے شمال میں بعض علاقوں میں حالات باعثِ تشویش ہیں۔ اس کے نتیجے میں ہزاروں خاندان نقل مکانی کرنے پر مجبور ہو چکے ہیں۔

مارٹن گریفتھس نے عالمی سلامتی کونسل کو آگاہ کیا کہ "یمن اس وقت نازک موڑ پر کھڑا ہے۔ وہ یا تو جارحیت میں کمی اور سیاسی عمل کے دوبارہ آغاز کی جانب جائے گا اور یا پھر مجھے اندیشہ ہے کہ زیادہ بڑے پیمانے پر تشدد اور مسائل کا سامنا ہو گا۔ یہ صورت حال مذاکرات کی میز کی جانب جانے والی راہ کو زیادہ دشوار بنا دے گی"۔

اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی کے مطابق عسکری جارحیت یمن کو تشدد کے ایک نئے گڑھے میں کھینچ کر لے جا سکتی ہے۔ اس کے نتیجے میں انسانی اور سیاسی صورت حال پر تباہ کن اثرات مرتب ہوں گے۔

گریفتھس نے یمن کے صوبوں مارب، الحدیدہ، الضالع، شبوہ، تعز اور صعدہ میں جاری لڑائی کی جانب بھی توجہ دلائی۔ الحدیدہ میں مرکزی بندرگاہ کے ذریعے یمن کی تجارتی اشیاء اور انسانی امداد کا 70% حصہ درآمد کیا جاتا ہے۔

یمن کی کُل آبادی 2.6 کروڑ نفوس پر مشتمل ہے۔ سال 2014 میں ایران نواز حوثی باغیوں کی جانب سے آئینی حکومت کا تختہ الٹے جانے کے بعد سے یمن کو جنگ کا سامنا ہے۔ باغیوں نے دارالحکومت صنعاء اور دیگر متعدد علاقوں پر قبضہ کر لیا تھا۔