.

لیبی فوج کے ترجمان رضاکارانہ طور پر دو ہفتے کے قرنطینہ میں داخل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لیبیا میں جنرل خلیفہ حفتر کی وفادار فوج کے ترجمان احمد المساری نے رضاکارانہ طور پر خود کو انفرادی قرنطینہ میں رکھنے کا اعلان کیا ہے۔ یاد رہے المساری نے یہ اقدام ایک وفد کے ہمراہ مصر کے دورے سے واپسی پر اٹھایا ہے۔

سوشل میڈیا فیس بک پر جاری کردہ ایک بیان میں احمد المساری نے بتایا ’’کہ انہیں یا ان کے ساتھ مصر جانے والے وفد کے ارکان کو کوئی مرض لاحق نہیں اور نہ ہی ان میں کرونا وائرس کی موجودگی کی علامات پائی گئی ہیں۔ تاہم وہ حکومتی فیصلوں، عوامی ذمہ داری اور صحت کے اصولوں کا پاس کرتے ہوئے رضاکارانہ طور پر دو ہفتوں کے لیے قرنطینہ میں جا رہے ہیں۔

احمد المسماری نے گذشتہ دنوں مصر کا دورہ کیا، جہاں ایک نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انھوں نے لیبیا میں سیاسی اور فوجی محاذ پر ہونے والی پیش رفت سے صحافیوں کو آگاہ کیا۔

ابھی تک لیبی حکام نے ملک کے اندر کرونا وائرس کے کسی کیس کی تصدیق نہیں کی تاہم طرابلس میں قائم قومی وفاق کی حکومت اور مشرقی لیبیا سے چلائی جانے والی عبوری حکومت نے احتیاطی تدابیر اور وائرس سے بچاؤ کے لیے حفاظتی انتظامات کا اعلان کر رکھا ہے۔ انہی تدابیر کے طور پر لیبیا کی بحری اور بری سرحدیں بند ہیں جنکہ تمام طبی مراکز میں ہنگامی حالت نافذ کر دی گئی ہے۔