.

حمد انٹرنیشنل ایئرپورٹ پر قطر ایئرویز کے 40% ملازمین عارضی طور پر فارغ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

قطر کی قومی فضائی کمپنی "قطر ایئرویز" کے ترجمان کا کہنا ہے کہ کرونا وائرس کی وبا کے سبب دوحہ کے حمد انٹرنیشنل ایئرپورٹ پر کمپنی کے ملازمین کی تعداد میں عارضی طور پر 40% کمی کر دی گئی ہے۔

ترجمان کے مطابق ملازمین کی مذکورہ کمی مختلف شعبوں میں عمل میں آئی ہے۔ ان میں غذائی مواد اور مشروبات، زمینی خدمات اور ریٹیل بزنس کا شعبہ شامل ہے۔ یہ اقدام حمد انٹرنیشنل ایئرپورٹ پر مسافروں کی تعداد میں کمی آنے کی روشنی میں مختصر مدت کے لیے کیا گیا ہے۔ ترجمان نے بتایا کہ متاثرہ ملازمین یا تو گھروں سے کام کر رہے ہیں، یا چھٹی پر ہیں اور یا پھر بنا تنخواہ کے رخصت لے رہے ہیں۔

دنیا بھر میں فضائی کمپنیاں کرونا وائرس سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والے اداروں میں سے ہیں۔ اس مہلک وبا نے حکومتوں کو سفر پر قیود عائد کرنے اور طیاروں کی آمد و رفت محدود کر دینے پر مجبور کر دیا ہے۔

قطر ایئرویز کے چیف ایگزیکٹو اکبر الباکر نے رائٹرز نیوز ایجنسی کو بتایا کہ ان کی کمپنی آخر کار حکومت سے مالی سپورٹ طلب کرنے پر مجبور ہو گی۔ انہوں نے خبردار کیا کہ پروازوں کو چلانے کے واسطے مطلوبہ سیالیت ختم ہونے کے قریب ہے۔ الباکر کے مطابق کمپنی کے ملازمین نے تنخواہ اور تنخواہ کے بغیر رخصتیں حاصل کی ہیں۔ انہوں نے مزید بتایا کہ بعض ملازمین کی جانب سے اجرتیں کم کرنے کی پیش کش کے باوجود کمپنی نے ملازمین کو تنخواہوں میں کمی پر مجبور نہیں کیا۔

کرونا وائرس کی وبا سے قبل قطر ایئرویز نے اعلان کیا تھا کہ کمپنی کو رواں مالیاتی سال میں خسارے کا سامنا ہو گا۔ اس کا سبب زیادہ طویل روٹس کا استعمال اور ان پر کثیر لاگت ہے۔