.

عراقی حزب اللہ کے رہ نما سے متعلق معلومات پر امریکا کا 1 کروڑ ڈالر انعام کا اعلان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکا نے جمعے کے روز ایک پیش کش میں اعلان کیا ہے کہ عراق میں حزب اللہ تنظیم کے سینئر عسکری رہ نما محمد الکوثرانی کے بارے میں معلومات فراہم کرنے والے کو ایک کروڑ ڈالر کی رقم انعام میں دی جائے گی۔

واضح رہے کہ الکوثرانی ایرانی پاسداران انقلاب کے سینئر کمانڈر جنرل قاسم سلیمانی کا معاون رہا ہے۔ سلیمانی رواں سال جنوری میں بغداد ایئرپورٹ پر امریکی ڈرون طیارے کے حملے میں مارا گیا تھا۔

امریکی وزارت خارجہ کے بیان میں کہا گیا ہے کہ الکوثرانی نے ایران کی حلیف نیم فوجی تنظیموں کے لیے سیاسی رابطہ کاری کی بعض ذمے داریوں کو پورا کیا۔ اس سے قبل یہ کام قاسم سلیمانی انجام دیتا تھا۔ بیان کے مطابق اس حیثیت سے الکوثرانی عراقی حکومت کے کنٹرول سے باہر رہ کر کام کرنے والی جماعتوں کی نقل و حرکت کے لیے سہولت کار بن رہا ہے۔ ان جماعتوں نے عوامی احتجاج کو پرتشدد طریقوں سے کچلا، غیر ملکی سفارتی مشنوں پر حملے کیے اور وسیع پیمانے پر منظیم مجرمانہ سرگرمیوں میں شریک رہیں۔

امریکا نے 2013 میں الکوثرانی کو عالمی دہشت گرد قرار دیا تھا۔ واشنگٹن نے اس پر الزام عائد کیا کہ وہ عراق میں مسلح جماعتوں کی فنڈنگ کر رہا ہے۔ اس کے علاوہ الکوثرانی کو اس بات کا بھی ذمے دار ٹھہرایا گیا کہ وہ عراقی جنگجوؤں کی شام منتقلی میں مدد کر رہا ہے تا کہ وہ اپوزیشن گروپوں کے خلاف شامی صدر بشار الاسد کو سپورٹ کر سکیں۔