.

اسرائیل کا شام میں لبنان کے سرحدی علاقے کے نزدیک حزب اللہ کی کار پر ڈرون حملہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی فوج نے شام میں لبنان کے سرحدی علاقے کے نزدیک حزب اللہ ملیشیا کے ارکان کی ایک کار پر ڈرون حملہ کیا ہے۔

لبنانی شیعہ ملیشیا کے ایک ذریعے نے بتایا ہے کہ ’’اسرائیلی ڈرون نے سرحدی علاقے میں پہلے ایک کار پر حملہ کیا تھا۔اس میں حزب اللہ کے ارکان سوار تھے۔ وہ اس حملے کے بعد کار سے باہر نکل آئے تو پھر اس کو دوسرے میزائل حملے میں نشانہ بنایا گیا ہے مگر اس حملے میں کوئی جانی نقصان نہیں ہوا ہے۔‘‘

برطانیہ میں قائم شامی رصدگاہ برائے انسانی حقوق نے کہا ہے کہ اسرائیلی فوج کے بغیر پائیلٹ طیارے نے لبنان کے ساتھ واقع جدیدت یابوس سرحدی گذرگاہ کے نزدیک اس کار کو نشانہ بنایا ہے۔یہ گذرگاہ کرونا وائرس کی وجہ سے بند ہے۔

شام کی سرکاری خبررساں ایجنسی سانا نے اسی علاقے میں ایک ’’سویلین کار‘‘ کے ہدف بننے کی اطلاع دی ہے لیکن یہ نہیں بتایا ہے کہ اس کو کس نے نشانہ بنایا ہے۔اسرائیلی حکام نے اس واقعے کے بارے میں کوئی بیان جاری نہیں کیا ہے۔

واضح رہے کہ ایران کی حمایت یافتہ شیعہ ملیشیا حزب اللہ 2013ء سے شام میں صدر بشارالاسد کی وفادارفوج کے ساتھ مل کر باغی گروپوں کے ساتھ لڑرہی ہے۔

اسرائیل نے2011ء کے اوائل میں شام میں خانہ جنگی کے آغاز کے بعد سے سیکڑوں فضائی حملے کیے ہیں اور ان میں شامی فوج کے علاوہ حزب اللہ کے جنگجوؤں اور ایران کی سپاہِ پاسداران انقلاب کے کمانڈروں کو نشانہ بنایا ہے۔اسرائیلی فوج اور حزب اللہ کے کئی ایک اسلحہ ڈپووں کو بھی ان حملوں میں تباہ کیا گیا ہے لیکن اسرائیل نے سرکاری طور پر شاذ ہی ان حملوں کی ذمے داری قبول کی ہے۔