.

عراق کے لوگ کرونا وائرس کا ٹیسٹ کرانا "باعثِ عار" سمجھتے ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی اخبار نیویارک ٹائمز کے مطابق شرمندگی کا احساس ،،، عراقیوں کو کرونا وائرس کا ٹیسٹ کروانے یا اس متعدی بیماری میں مبتلا ہونے کے اعلان سے روک رہا ہے۔

عراقی ڈاکٹروں نے باور کرایا ہے کہ یہ موضوع معاشرتی طور پر نہایت حساس اور دشوار شمار ہو رہا ہے۔ یہاں تک کہ بعض لوگ اس وجہ سے اپنے گھروں کو نہیں جا رہے کہ پڑوسی انہیں دیکھ لیں گے۔

امریکی اخبار کا کہنا ہے کہ "باعثِ عار ہونے کا احساس" اُن اہم ترین رکاوٹوں میں سے ہے جو عراق میں کرونا کی روک تھام کے لیے جاری کوششوں کی راہ میں حائل ہیں۔

بہت سے لوگ طبی نگہداشت طلب کرنے یا کرونا کا ٹیسٹ کرانے میں ٹال مٹول سے کام لے رہے ہیں۔ یہاں تک کہ ان کا مرض اگلے مرحلے تک پہنچ جاتا ہے۔

السومریہ نیوز کے مطابق پیر کے روز عراقی وزارت صحت نے اعلان کیا تھا کہ ملک میں کرونا وائرس کے 26 نئے کیس سامنے آئے ہیں جب کہ 77 افراد صحت یاب ہوئے۔

وزارت صحت کے مطابق مختص کی جانے والی لیبارٹیریز نے گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 2376 افراد کے کرونا وائرس کے ٹیسٹ کیے۔

وزارت صحت نے باور کرایا ہے کہ وائرس کی روک تھام کے لیے متعلقہ حکام کی جانب سے جاری ہدایات اور فیصلوں پر عمل درامد جاری رکھنے کی ضرورت ہے۔