.

لیبی فوج کا طرابلس میں داخل ہونے والے اسلحہ کی عالمی مانیٹرنگ کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لیبیا کی نیشنل آرمی نے یورپی ممالک پر زور دیا ہے کہ وہ طرابلس میں قومی وفاق حکومت کو بیرون ملک سے ہونےوالی اسلحہ سپلائی کی نگرانی کرے اور تاکہ طرابلس کو اسلحہ کی سپلائی روکی جاسکے۔

العربیہ او الحدث ٹی وی چینلوں کے ذرائع کے مطابق لیبیا کی نیشنل آرمی نے کہا ہے کہ وہ طرابلس کو اسلحہ کی ترسیل روکنے کے لیے عالمی مانیٹرنگ کے مطالبے پر قائم ہے۔ لیبی فوج نے یورپی ممالک سے کہا ہے کہ وہ طرابلس حکومت کو ترکی کی طرف سے اسلحہ کی ترسیل پر نظر رکھیں۔

نیشنل آرمی نے عالمی برادری سے مطالبہ کیا کہ وہ قومی وفاق حکومت کے ساتھ طے پائے تمام دفاعی معاہدے منجمد کرے تاکہ لیبیا میں ترکی کے حمایت یافتہ عسکری گروپوں کی کمر توڑی جاسکے اور ترک فوج کو لیبیا سے بے دخل کرنے کی راہ ہموار کی جاسکے۔

ذرائع کا مزید کہنا ہے کہ لیبی فوج نے عالمی برادری سے اپیل کی کہ وہ ترکی کے راستے لیبیا داخل ہونے والے عسکری گروپوں کی بھی مانیٹرنگ کرے۔

جنرل خلیفہ حفتر کی زیرکمان فوج کا کا کہنا ہے کہ ترکی نہ صرف شام سے جنگجو بھرتی کرکے لیبیا بھیج رہا ہے بلکہ طرابلس میں ترکی فوجیوں کی بڑی تعداد بھی مختلف ذمہ داریوں پر مامور ہے۔ ان میں ترکی کے ملٹری انجینیر اور نیوی کے اہلکار بھی شامل ہیں۔